سو لفظوں کی کہانیاں ۔۔۔ اکانوے سے پچانوے

(Syed Anwer Mahmood, Karachi)

آج میں پھر لاہور جارہا ہوں، میرئے پاس فاطمہ کےلیے بہت سارئے پھول ہیں ، گجرئے نہیں کیونکہ قبر پر پھول ڈالے جاتے ہیں گجرئے نہیں، فاطمہ جمشید لاہور کے چیرنگ کراس دھماکےمیں جاں بحق ہوگئی۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 91۔۔۔۔ تبدیلی ۔۔۔۔۔۔
بچپن میں ایک صاحب ہمارئے گھرآئے امی سے والد کا نام پوچھا
امی نے مجھے بلایا اور کہا ان کو اپنے ابا کانام بتادو
امی سے پوچھا آپ نےکیوں نہیں بتایا
بولی بیویاں اپنے شوہر کا نام نہیں لیتیں
میری شادی ہوئی تو ہم میاں بیوی نے
ایک دوسرئے کو نام سے نہیں پکارا
تبدیلی یہ آئی کہ بیگم صاحبہ جب کسی انجان سے بات کرتی
تو جلدی جلدی سے کہتی کہ میں مسز انور بات کررہی ہوں
بہو صاحبہ آیں اور زیادہ تبدیلی آئی، بڑئے دھڑلے سے بتاتی ہیں
ابوآج نبیل (میرئے بیٹے) کو دفترمیں دیر ہوجائے گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 92۔۔۔۔’’گو ماما گو‘‘۔۔۔۔۔۔
ناز صبح جلدی اٹھتی سارئے کام کرتی
بچی کو اسکول چھوڑنے جاتی، واپس آکر گھر کے کام کرتی
دوپہر کو بچی کو واپس لاتی، سارا دن بچی کے آگے پیچھے دوڑتی
اپنی ساس کی بھی خدمت کرتی
شام کو جب بچی کے پاپا گھر آجاتے
تو وہ فورا اپنے پاپا کی گودمیں چلی جاتی اورا پنی ماما کو کہتی ’گو ماما گو‘
ایک دن پاپانے پوچھا آپ کو ’گو ماما گو‘ کس نے سکھایا
بچی نے بتایا دادی نے
دادی کرکٹ کی شوقین ہیں،عمران خان بہت پسند ہیں
بہو پسند نہیں ہے اس لیے’ نواز‘ کی جگہ’ ماما‘ لگادیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 93۔۔۔۔ریڈ وارنٹ۔۔۔۔۔۔
لندن پہنچا تو مصطفی عزیزآبادی سے پوچھا
الطاف حسین کے ریڈوارنٹ کا کیا ہوگا؟
عزیزآبادی بولے، ہمارئے وزیر داخلہ کو جھوٹ بولنے
اور طویل پریس کانفرنس کرنے کی بیماری ہے
اسلام آباد پر تین گھنٹے قابض رہنے والےاور
ایک دہشتگرد ملا عبدالعزیزکو تو پکڑ نہیں پاتے
اب الطاف حسین برطانوی شہری ہے
اس ریڈ وارنٹ کا فائدہ ایم کیو ایم کو یہ ہوگا کہ
پابندی کے باوجو میڈیا پرالطاف حسین کی خبریں چل رہیں ہونگیں
ٹھیک اسی وقت نیوز چینل پر چوہدری نثار ایک پریس کانفرنس میں بتارہے تھے کہ
برطانوی حکومت اپنے شہری کو دینے کو تیار نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 94۔۔۔۔گجرئے۔۔۔۔۔۔
کل صبح میں لاہور میں تھا
فاطمہ جمشید سے ملا تو وہ بہت خوش تھی
بولی انکل آپ تو واپس کراچی جارہے ہیں
میں نے مسکرا کر جواب دیا بیٹا وعدہ میں آپکی شادی میں ضرور شرکت کرونگا
فاطمہ نے شرماکر مجھ سے فرمائش کی کہ
کراچی سے میرئے لیے اچھے سے گجرے لایے گا
تیس سالہ فاطمہ کی اگلے ماہ شادی طے تھی
آج میں پھر لاہور جارہا ہوں
میرئے پاس فاطمہ کےلیے بہت سارئے پھول ہیں ، گجرئے نہیں
کیونکہ قبر پر پھول ڈالے جاتے ہیں گجرئے نہیں
فاطمہ جمشید لاہور کے چیرنگ کراس دھماکےمیں جاں بحق ہوگئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 95۔۔۔۔تنخواہ۔۔۔۔۔۔
گذشتہ چھ ماہ سے تنخواہ نہیں ملی تھی
اپنے ساتھیوں کے ساتھ وہ بھی روز احتجاج کرتا تھا
آفس سے چھٹی ہونے کے بعدوہ قرض مانگنے کی مہم پر نکل پڑتا
عزیزوں اور دوستوں سے قرض لاتا تو گھر کا چولھا جلتا تھا
بچوں کو اسکول والوں نے فیس نہ جمع
کرانے کی وجہ سے اسکول سےنکال دیا تھا
بچوں کی بڑھتی ہوئی پریشانیاں اور
تنخواہ نہ ملنے کی وجہ سے وہ بہت مایوس تھا
ایک خبر کے مطابق سرکاری ادارے واسا کے ایک ملازم
عتیق الرحماننے قرض اورفاقہ کشی سے تنگ آکر
گلے میں پھنداڈال کرخودکشی کرلی
 
Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
18 Feb, 2017 Total Views: 483 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Syed Anwer Mahmood

Syed Anwer Mahmood always interested in History and Politics. Therefore, you will find his most articles on the subject of Politics, and sometimes wri.. View More

Read More Articles by Syed Anwer Mahmood: 472 Articles with 173110 views »
Reviews & Comments
very nice,,,,,,,,,
By: umama khan, kohat on Feb, 27 2017
Reply Reply
0 Like
ساری کہانیاں لاجواب ہیں لیکن گجرے والی کہانی نے تو رلادیا۔
By: Syed Anwer Mahmood, Karachi on Feb, 23 2017
Reply Reply
0 Like
Short but quite educative for many. These have many lessons for many of us. We can mend our behaviour/attitude, provided we are prepared for the Change!! well done.
By: sarwar, Lahore on Feb, 20 2017
Reply Reply
0 Like
Very nice,,,,
By: Mini, mandi bhauddin on Feb, 19 2017
Reply Reply
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB