LATEST ARTICLES & COLUMNS

تازہ ترین مضامین اور کالم
Hamariweb's Articles section provides the opportunity to online users to read thousands of quality articles in both Urdu and English languages, submitted by expert authors and writers.

MORE RECENT ARTICLES & COLUMNS

درد اور دوا
(By: Muhammad Altaf Shahid)   May 27, 2016
12 لاکھ کسان
(By: Ghulam Ullah Kiyani)   May 27, 2016
پاناما کے سائے تلے سب ایک ہیں
(By: Nadia Khan Baloch)   May 27, 2016
چاہ بہار بمقابلہ گوادر
(By: Ghulam Ullah Kiyani)   May 27, 2016
کر بھلا ہو بھلا
(By: R.S Mustafa)   May 27, 2016
جہد مسلسل کا پیکرچل بسا
(By: Syed Muzammil Hussain)   May 27, 2016
شادی بیاہ اسلامی شریعت میں
(By: Syed Farooq Ahmed Syed)   May 27, 2016
غفلت
(By: Sadia Javed)   May 27, 2016
عورت کے حقوق اور اسلام
(By: Zara Nasir)   May 27, 2016
ٹرمپ کیا ہونگے صدر؟
(By: Falah Uddin Falahi)   May 27, 2016
سُستی اور ہماری زندگی
(By: Muhammad Jawad Khan)   May 27, 2016
FEATURED WRITERS By  
Moulana Nadeem Ansari
(45 Articles)
Falah Uddin Falahi
(109 Articles)
جاوید صدیقی
(156 Articles)
Dr Saleem Khan
(256 Articles)
Munir Bin Bashir
(56 Articles)
Akhtar Sardar
(303 Articles)
Sarwar Sidduiqi
(178 Articles)
Muhammad Azam Azim Azam
(910 Articles)
Shaikh Khalid Zahid
(102 Articles)

New Writers

 Urdu Articles & Columns

Putting your thoughts to paper is something creative. Inking your views and ideas about various segments of society is something credible. HamariWeb acknowledges the write ups and articles submitted by the valuable writers across Pakistan. We scrutinize and publish them online. You can write Urdu columns for various newspapers that are published online on HamariWeb. Urdu Columns and Articles are written on various categories like current affairs, politics, true stories, health, education, poetry, sports, novel, literature to name a few. Urdu Columns Pakistan is updated on regular basis with the most recent ones listed on the top. Urdu Columns today are popular due to their abrupt and critic style of writing.

HamariWeb gives you an opportunity to write and share Urdu columns online. You can share Jang columns, and other relevant latest Urdu columns for the viewers to read and facilitate from them. You can browse this page by the name of featured writers to read their work.

Read the finest and latest Urdu Articles published online on this page. You will find pure masterpieces in Urdu language posted here, that are thought provoking, and engaging the readers in true sense. You can read and share the articles written by our features writers online. Our family of writers has increased as more intellectual minds have joined the legacy. The content of these articles are accurate, interesting and informative. Write, read, and share Urdu Articles with freedom of expression!

LATEST REVIEWS

100 Questions/Answers on Holy Quran
قبرستان میں قرآن پڑھنے کا حکم

قبرستان میں قرآن مجید پڑھنے کا سنت سے کوئی ثبوت نہیں ہے مثلاً سیدہ عائشہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کہ میں قبرستان والوں کیلئے کیا کہوں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم کہا کر و:
رسو ل اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس موقع پر صرف سلام اور دعا ہی سکھائی ہے۔ قرآن مجید کا کوئی حصہ پڑھنے کی تعلیم نہیں دی ۔ا گر وہاں قرآن پڑھنا جائز ہوتا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کبھی نہ چھپاتے اور اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام کو کچھ بتایا ہو تا تو ہم تک بھی ضرور پہنچ جاتا مگر یہ کسی صحیح سند سے ثابت نہیں ہے۔
اسکی مزید تاکیدر سول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے اس فرمان سے ہوتی ہے کہ :
'' آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اپنے گھروں کو قبریں نہ بنائوں پس بیشک شیطان اس کے گھر سے بھاگتا ہے جس پر سورہ بقرہ پڑھی جائے''
معلوم ہوا کہ قبرستان سورہ بقرہ پڑھنے کی جگہ نہیں ہے۔ یہ حدیث اس طرح ہے جس طرح دوسری حدیث میں فرمایا :
'' اپنے گھروں میں نماز پڑھو اور انہیں قبریں نہ بنائو '' (صحیح مسلم ، کتاب صلاة المسافرین و قصر ھا باب استحباب صلاة النافلة فی بیتہ و جواز ھا فی المسجد )
اس سے معلوم ہو اکہ جس طرح قبرستان میں نماز پڑھنا جائز نہیں ۔ا سی طرح قبرستان میں قرآن مجید پڑھنا درست نہیں ۔

قبر پر سورۃ بقرہ وغیرہ پڑھنا

س: اس مسئلہ کی کتاب و سنت کی روشنی میں وضاحت فرمائیں کہ حدیث میں آتا ہے ؟
اس حدیث کی وضاحت کریں کہ کیا یہ پڑھنا کسی صریح مرفوع حدیث سے ثابت ہے جبکہ دوسری طرف نبی کرم صلی اللہ علیہ وسلم نے قبرپر قرآن پڑھنے سے منع کیا کہ قبروں کو عبادت گاہ نہ بنایا جائے اور ایک حدیث میں آتا ہے کہ گھروں میں سورة بقرة پڑھا کرو او رانہیں قبریں نہ بناؤں۔ برائے مہربانی اس کی وضاحت فرمائیں آپ کا شکریہ ۔

ج: آپ نے عبداللہ بن عمر کی جو روایت نقل کی ہے کہ انہوں نے ر سول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا :'' جب تم میں سے کوئی شخص فوت ہو جائے تو اسے روک کر نہ رکھو اور اس کی قبر کی طرف جلدی لے جاؤ اور اس کے سر کے پاس سورہ بقرہ کی ابتدائی آیات پڑھی جائیں اور اسکے پائوں کے پا س سورہ بقرہ کی آخیر آیات پڑھی جائیں۔ا س روایت کی وجہ سے یہ رواج عام پایا جاتا ہے کہ میت کی قبر پر آیات پڑھی جاتی ہیں۔ کئی اہل حدیث حضرات بھی ا س پر عمل کرتے ہیں حالانکہ روایت کے ساتھ لکھا ہے کہ اسے بیہقی نے شعیب الایمان میں رویات کیا ہے صحیح بات یہ ہے کہ عبداللہ بن عمر پر موقوف ہے یعنی ان کا اپنا قول ہے ( رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان نہیں ) ۔
حقیقت یہ ہے کہ یہ روایت نہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے نہ عبداللہ بن عمر سے ۔ شیخ ناصر الدین البانی نے مشکوة کی تعلیق میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف منسوب روایت کے متعلق لکھا ہے کہ اسے بیہقی کے علاوہ طبرانی نے معجم کبیر (۳/۲۰۸/۲) میں اور خلال نے کتاب القرائت عندالقبور (ق۲۵/۲) میں بہت ہی ضعیف سند کے ساتھ روایت کیا ہے۔ا س میں ایک راوی یحیی بن عبداللہ بن ضحاک بابلتی ہے جو ضعیف ہے۔ اسے ایوب بن نہیک سے روایت کیا ہے جسے ابو خاتم وغیرہ نے ضعیف کہا ہے اور ازدی نے کہا کہ وہ متروک ہے ۔
مشکوة میں شعیب الا یمان سے بہیقی کا قول جو نقل کیا ہے کہ :'' صحیح بات یہ ہے کہ یہ ابن عمر پر موقوف ہے '' تو شعیب الایمان میں مجھے بیہقی کے یہ الفاظ نہیں ملے۔ انہوں نے مروع روایت نقل کرنے کے بعد فرمایا ہے :
'' دیکھئے شعیب الایمان حدیث۹۲۹۴ یعنی یہ مر فوع روایت میرے علم کے مطابق صرف اسی سند میں آتی ہے اور اس میں مذکور (سورہ بقرة کی آیات کی ) قرأت ہمیں عبداللہ بن عمر سے موقوفاً روایت کی گئی ہے۔ اس سے معلوم ہوا کہ بیہقی نے ابن عمر کی موقوف روایت کو صحیح نہیں کہا بلکہ صر ف یہ ذکر کیا ہے کہ عبداللہ بن عمر سے موقوفاً یہ روایت آتی ہے ۔

forum.mohaddis.com/threads/5731/page-10
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on May, 26 2016

پاکستان کے وہ تاریخی قلعے جو ضرور دیکھنے چاہئیں
I WAS NOT EVEN BORNED WHEN PAKISTAN CAME TO EXSISTANCE. IF I AM ALLOWED TO WRITE AN FEW WORDS,WHEN MOHAMMED ALI JINNAH WAS PUSHING FOR PAKISTAN MOST OF HIS ASSOCIATES WAS TOO BUSY TO GUARD THEIR INTREST OR THEY WERE OPPORTUNIST. NO- BODY WAS THEIR TO FORECAST THE OUT- COME OF PAKISTAN.I THINK, MUSLIM LEAUGE SHOULD HAD DIALOGUE WITH SIKH PEOPLE .MUSLIM LEAUGE SHOULD HAVE INSPIRED THEM TO HAVE HOME.AT THE TIME WHEN INDIA GOT DIVISON MAJORITY MUSLIMS WERE READY TO PUT EVERY -THING ON PAKISTAN,S DISPOSAL. BUT THEY COULD NOT ASSUME [SEE OR GUESS, FORE - CAST] ANTI -CHRIST MISSON. AL- HAMDU LILLAH PAKISTAN WAS CARVED OUT OF INDIA. BUT WHEN PAKISTANI FLAG BECAME OFFICIAL THEN ANTI-CHRIST[FORE-RUNNERS] TOOK CONTROL OF PAKISTAN.THEY PUSHED THEIR PEOPLE [PIND DA BANDHA] IN ALL OFFICIAL DEPARTMENTS. MY FATHER WAS POSTED IN RISALPUR,MY FATHER TOLD D-R[DESPATCH-RIDER] JINAB KHAN SAHIB YOU SHOULD HAPPY NOW WE ARE INDEPEDENT NATION. D-R ANSWERED WE ARE NOW IN-DIRECT SLAVES[WE ARE SLAVES OF SLAVES]. WHEN THEY TOOK OVER [BRITISH SAID ;WE SHOULD LEAVE INDIA BUT WE SHOULD LEAVE OUR BRAIN HERE] EVERY THING THEY DID NEGATIVE FOR MUSLIMS BUT *ALLAH*ST DID NOT GIVE THEM DESIRED RESULTS. IN THEIR DOCTRINE JIHAD IS HARAM WHY THEY ARE IN THE ARMY.PAKISTAN CAN NEVER ACHIEVE ANY THING FROM OPPRESSOR TIL THEY DO NOT FOLLOW ISLAMIC- NCODES IN ORIGINAL FORM WHEN PAKISTAN STARTED FUNCTIONING. SOME -ONE SHOULD HAVE LOGGED ALL HISTORICAL PLACES.ALL HISTORICAL PLACES SHOULD HAVE MAINTAINNANCE SCHDULE. IF WE LOST HISTORY , WE SEIZE TO EXSIST. THE PAK ARMY DID SOME JOB BUT ARMY CAN NOT MAINTAIN ALL HISTORICAL PLACES. NOW THE PAKISTANIS ARE TAKING SOME GOOD MEASURES. MAY *ALLAH* GIVE THEM FULL WISDOM.
????????????????
By: IFTIKHAR AHMED KHAN, CALGARY ALBERTA CANADA on May, 26 2016

پاکستانیوں کو36ممالک میں ویزے کے بغیرجانےکی سہولت
I am a british national and live in the UK, I need help in getting the visit visa for my czn. You can whatsapp me if you can help in this matter. Thanks 00447453301708.
By: Ahmed, Glasgow on May, 26 2016

ارکان پارلیمان کی تنخواہوں میں اضافہ
ایم کیو ایم کے بعد ایک خبر کے مطابق پاکستان تحریک انصاف نے بھی اراکین پارلیمنٹ کی تنخواہوں میں اضافہ مسترد کر دیا۔ا س بات کا فیصلہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی زیر صدارت تحریک انصاف کے رہنماؤں کے اجلاس میں کیا گیا۔
یہ کام اسمبلی اس وقت ہونا چاہیے تھا جب سب چیخ چیخ کر تنخواہوں میں اضافہ کی قرارداد کی تائیدکررہے تھے۔
بہرحال دیر آید درست آید۔۔
By: Kamal, Karachi on May, 26 2016

میری سر گذستِ حیِات۔ اپنی زبانی
بہت خوب لکھا ہے آج بہت کچھ معلوم ہوا
By: Adeel samdani , Jeddah on May, 26 2016

MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB