Education Articles

Educational Articles - Education is important for everyone. The Nation cannot be civilized until its educated one. By following this concept we are trying to provide Articles on Education. We would fe.. Read more

Educational Articles - Education is important for everyone. The Nation cannot be civilized until its educated one. By following this concept we are trying to provide Articles on Education. We would feel proud and satisfied if any of you get availed by our Articles. Here you can read Articles on many topics that will help you in your studies, projects and assignments.

LATEST REVIEWS

Arabic and the making of the Islamic Mind
Arabic
From Wikipedia, the free encyclopedia
This article is about the general language or language group. For the literary standard, see Modern Standard Arabic. For the various vernaculars, see varieties of Arabic. For the language family including Maltese, see Arabic languages.
Arabic
العَرَبِيَّة / عَرَبِيّ
ʻarabiyy / al-ʻarabiyyah
Arabic albayancalligraphy.svg
al-ʿArabiyyah in written Arabic (Naskh script)
Pronunciation /ʕaraˈbijː/, /ʔalʕaraˈbijːah/
Native to Countries of the Arab League, minorities in neighboring countries Chad, Eritrea, Ethiopia, Iran, Kenya, Madagascar, Mali, Mozambique, Niger, Senegal, South Sudan, Tanzania, Turkey, etc.
Native speakers
420 million (2016)[1]
Language family
Afro-Asiatic
Semitic
Central Semitic
Arabic languages
Arabic
Standard forms
Modern Standard Arabic
Dialects
Western (Maghrebi)
Central (incl. Egyptian, Sudanese)
Northern (incl. Levantine, Mesopotamian)
Peninsular (Gulf, Hejazi, Najdi, Yemeni)
Writing system
Arabic alphabet
Arabic Braille
Syriac alphabet (Garshuni)
Hebrew alphabet (Judeo-Arabic languages)
Greek alphabet (Cypriot Maronite Arabic)
Latin script (Maltese, Lebanese Arabic, Tunisian Arabic)
Signed forms
Signed Arabic (national forms)
Official status
Official language in
Modern Standard Arabic is an official language of 28 states, the third most after English and French[2]
List[show]
Regulated by
List[show]
Language codes
ISO 639-1 ar
ISO 639-2 ara
ISO 639-3 ara
Glottolog arab1395[3]
Linguasphere 12-AAC
Arabic speaking world.svg
Arabic is the sole official language

Arabic is a co-official language

Arabic is an official language but a minority
This article contains IPA phonetic symbols. Without proper rendering support, you may see question marks, boxes, or other symbols instead of Unicode characters.
This article contains Arabic text. Without proper rendering support, you may see question marks, boxes, or other symbols.
Arabic (Arabic: العَرَبِيَّة‎‎, al-ʻarabiyyah [ʔalʕaraˈbijːah] ( listen) or Arabic: عَرَبِيّ‎‎ ʻarabiyy [ʕaraˈbijː] ( listen)) is the Classical Arabic language of the 6th century and its modern descendants excluding Maltese. Arabic is spoken in a wide arc stretching across Western Asia, North Africa, and the Horn of Africa. Arabic belongs to the Semitic branch of the Afroasiatic family.

The literary language, called Modern Standard Arabic or Literary Arabic, is the only official form of Arabic. It is used in most written documents as well as in formal spoken occasions, such as lectures and news broadcasts.

Some of the spoken varieties are mutually unintelligible,[4] both written and orally, and the varieties as a whole constitute a sociolinguistic language. This means that on purely linguistic grounds they would likely be considered to constitute more than one language, but are commonly grouped together as a single language for political or religious reasons (see below). If considered multiple languages, it is unclear how many languages there would be, as the spoken varieties form a dialect chain with no clear boundaries[citation needed]. If Arabic is considered a single language, it is perhaps spoken by as many as 422 million speakers (native and non-native) in the Arab world,[5] making it one of the six most-spoken languages in the world. If considered separate languages, the most-spoken variety would most likely be Egyptian Arabic[6] with 89 million native speakers[7]—still greater than any other Afroasiatic language. Arabic also is a liturgical language of 1.6 billion Muslims.[8][9] It is one of six official languages of the United Nations.[10]

The modern written language (Modern Standard Arabic) is derived from the language of the Quran (known as Classical Arabic or Quranic Arabic). It is widely taught in schools and universities, and is used to varying degrees in workplaces, government, and the media. The two formal varieties are grouped together as Literary Arabic, which is the official language of 26 states and the liturgical language of Islam. Modern Standard Arabic largely follows the grammatical standards of Quranic Arabic and uses much of the same vocabulary. However, it has discarded some grammatical constructions and vocabulary that no longer have any counterpart in the spoken varieties, and has adopted certain new constructions and vocabulary from the spoken varieties. Much of the new vocabulary is used to denote concepts that have arisen in the post-Quranic era, especially in modern times.

Arabic is written with the Arabic alphabet, which is an abjad script and is written from right-to-left although the spoken varieties are sometimes written in ASCII Latin from left-to-right with no standardized forms.

Arabic has influenced many languages around the globe throughout its history. Some of the most influenced languages are Persian, Turkish, Urdu, Kurdish, Somali, Swahili, Bosnian, Kazakh, Bengali, Hindi, Malay, Indonesian, Tigrinya, Pashto, Punjabi, Tagalog, Sindhi and Hausa. During the Middle Ages, Literary Arabic was a major vehicle of culture in Europe, especially in science, mathematics and philosophy. As a result, many European languages have also borrowed many words from it. Many words of Arabic origin are also found in ancient languages like Latin and Greek. Arabic influence, mainly in vocabulary, is seen in European languages, mainly Spanish and Portuguese owing to both the proximity of Christian European and Muslim Arab civilizations and 800 years of Arabic culture and language in the Iberian Peninsula, referred to in Arabic as al-Andalus. Balkan languages, including Greek, have also acquired a significant number of Arabic vocabulary through contact with Ottoman Turkish.

Arabic has also borrowed words from many languages, including Hebrew, Aramaic, Greek, Persian and Syriac in early centuries, Kurdish in medieval times and contemporary European languages in modern times, mostly English and French.
By: Dr shaikh wali khan almuzaffar, Karachi on Jul, 24 2016

لبید کا حفظ قرآن
بچوں میں حفظ قرآن کا شغف کیسے پیدا کریں؟
6 أغسطس 2013 SAFAT اترك تعليقًا
ترجمہ: مبصرالرحمن قاسمی(کویت)

[email protected]

بچوں میں حفظِ قرآن کا شغف پیدا کرنے کے مختلف طریقے ہیں، ذیل میں ہم چند مفید طریقوں کی جانب اشارہ کررہے ہیں، جو حفظ قرآن کا شغف پیدا کرنے میں بے حد معاون ہیں۔

ایام حمل میں قرآن کریم کی سماعت:

متعددامریکی ماہرین کا کہنا ہے کہ ماں کی خوشی، غم، غصہ اور پریشانی جیسے حالات سے جنین متاثر ہوتا ہے، اگر ماں بآواز بلند کچھ پڑھتی ہے تو جنین ماں کی قرات کا اثر لیتا ہے۔ اگر ماں قرآن کریم پڑھے یا کثرت سے قرآن کریم سنے تویقینا سعادتمندی کی بات ہے، کیونکہ بچہ اپنی ماں کی جانب سے حاصل ہونے والے خیر کے ذریعہ راحت پاتا ہے، اس طرح اللہ کاکلام ماں کی جانب سے بچے کے لیے سب سے عظیم سرمایہ ثابت ہوسکتا ہے، شیخ ڈاکٹر محمد راتب النابلسی کے بقول ”قرآن پڑھنے والی حاملہ ماں کا نومولود قرآن سے تعلق رکھنے والا ہوتا ہے“۔ [کتاب تربیةاسلامیہ].

ایام رضاعت میں سماعت قرآن اور تلاوت:

ماہرین کا کہنا ہے کہ دودھ پیتا بچہ اپنے اطراف کی چیزوں کا اثر لیتا ہے،جبکہ اس کے حواس میں سماعت کی سب سے پہلے شروعات ہوتی ہے، بچہ ایام رضاعت میں مفرد الفاظ کو جمع کرنا شروع کردیتا ہے، گرچہ وہ ایام رضاعت میں ان الفاظ کو ادا نہیں کرسکتا لیکن یہی مفردات کو وہ بعد میں ادا کرنے پر قادر ہوجاتا ہے، اگر دودھ پلانے والی ماں کو اس عرصے میں قرآن کریم کی سماعت یا بآواز بلندتلاوت کا موقع میسر آجائے،تو کوئی شک نہیں کہ اس کا یہ عمل بچہ پر بہت زیادہ اثر انداز ہوگا، اور بچے کے لیے حفظ قرآن کریم کرنا آسان ہوگا،یہی وجہ ہے کہ اللہ تعالی ماں کو حکم دیتا ہے کہ وہ اپنے بچے کو دو برس تک دودھ پلائے، اللہ تعالی نے اسے بچے کا حق قرار دیا ، اسی طرح اللہ تعالی رضاعت کے عرصے میں ماں کو بچے کے کھانے، پینے اور اسے لباس پہنانے کا ذمہ دار بناتا ہے، جیسا کہ ارشاد باری تعالی ہے:

ترجمہ: ”مائیں اپنی اولاد کو دو سال کامل دودھ پلائیں جن کا ارادہ دودھ پلانے کی مدت بالکل پوری کرنے کا ہو اور جن کے بچے ہیں ان کے ذمہ ان کا روٹی کپڑا ہے جودستور کے مطابق ہو۔“ [البقرة: 233].

بچے کے سامنے تلاوت قرآن:

چھوٹے بچے اکثر اپنی ماں کی حرکات وسکنات اور ماں کے رکوع وسجود کی نقل کرتے ہیں، اگر بچے کے سامنے کثرت سے تلاوت ہوتو یہ عمل بچے کے لیے یقینا محبوب بن جائے گا، بعدمیں ماں کا یہی عمل بچہ کے حفظ کرنے میں مددگار ثابت ہوگا، مزید یہ کہ تلاوت کی برکات پورے گھر اور پورے کنبے کے لیے باعثِ خیر ہوگی،یقینا تلاوت کی فضیلت اور اس کے ثواب کا ہم انداز ہ نہیں لگا سکتے۔

۴۔ قرآن مجید سب سے قیمتی اور خوبصورت ہدیہ:

انسان کی فطرت میں ہی شامل ہے کہ وہ اپنی ملکیت کی چیزسے محبت کرتا ہے، ہم اکثر بچوں کو دیکھتے ہیں کہ وہ اپنے کھلونوں کو بدن سے چمٹائے رکھتے ہیں، ان کی حفاظت کرتے ہیں اور وقتا فوقتا اس کی نگرانی کرتے ہیں،بچوں کے اس رجحان کو ہم ایک بڑے مقصد کی جانب موڑ سکتے ہیں، اگر مختلف مواقع پر قرآن کریم گفٹ دیئے جائیں تو بچوں کا قرآن سے تعلق مزید بڑھے گا اور یہی تعلق انہیں قرآن کریم کے حفظ پر آمادہ کرے گا۔

ناظرہ ختم قرآن کے موقع پر تقریب کا اہتمام:

ترغیب اور حوصلہ افزائی انسانی نفس کو مرغوب ہے، جبکہ یہ چیز بچوں میں اور بھی زیادہ پائی جاتی ہے،لہذا جب بھی بچوں کا ناظرہ ختم قرآن ہو، ایک چھوٹی سی تقریب میں ان کی حوصلہ افزائی کی جائے، اس موقع پر انھیں قرآن کریم کا خوبصورت نسخہ گفٹ دیا جائے،نتیجةً بچہ اس طرح کی تقریب کو زندگی بھر یاد رکھے گا بلکہ اس طرح کی تقاریب کے بار بار آنے کا منتظر رہے گا، اور ظاہر بات ہے اس کے نتیجے میں قرآن کریم سے اس کے تعلق میں مزید مضبوطی پیدا ہوگی۔لہذا حفظ قرآن کے لیے بچہ محبت وشوق کے ساتھ تیار ہوجائے گا اور اس پر زبردستی اور زور ڈالنے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔

قرآن کریم میں بیان کیے گئے قصے :

قصے کہانیاں بچوں کے لیے محبوب ہوتے ہیں،اگر والدین اپنے بچوں کو آسان فہم زبان میں قرآن کریم کے قصے سنانے کے اہل ہوں تو بچوں کو قرآن کریم کے نصوص کی جانب بھی اشارہ کریں کہ یہ قصہ فلاں سورہ اور فلاں آیت میں بیان کیا گیا جس کی وجہ سے بچوں میں قرآن سے لگاو اور تعلق میں اضافہ ہوگااور بچے بہت آسانی سے قرآنی الفاظ اور زبان سے مانوس ہوجائیں گے۔

حفظ ِقرآن کریم کے مسابقوں کا انعقاد،بالخصوص چھوٹی چھوٹی سورتوں پر مشتمل مسابقے: گھر کے اندر بھائیوں اور بہنوں کے مابین اسی طرح اڑوس پڑوس کے بچوں اور ان کے دوست واحباب سے مدد لے کر ان بچوں کے مابین حفظ قرآن کریم کی ترغیب وحوصلہ افزائی کے لیے مسابقات منعقد کرائے جائیں، اس موقع پر بچوں کی عمر کا خیال رکھا جائے کہ اگر بہت چھوٹے بچے ہوں تو مثال کے طور پر ان سے یہ پوچھا جائے کہ ابرہہ نے قریش کے خلاف جنگ میں کونسا جانور استعمال کیا تھا وغیرہ، اس طرح کے سوالات بچوں کو حفظ قرآن کریم پر آمادہ کرنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔

ابتدائی سالوں میں قرآن کریم کے ذریعے تعلیم دینا:

بچوں کو قرآن کریم کی آیات کے ذریعے لکھنا پڑھنا سکھایا جائے، اسی طرح حساب کی ابتداءنماز کی رکعات کے ذریعے کریں، جبکہ علم احیاءکا آغاز قرآن کریم میں وارد مختلف قسم کے حیوانات کے ناموں سے کریں، اور تاریخ کا آغاز قرآن کریم میں مذکور سابقہ قوموں کے قصوں سے کریں، جبکہ کائنات کے مناظرکا علم یعنی جغرافیہ کا آغاز قرآن کریم میں مذکور آسمان وزمین، لیل ونہار اور بحر وبر سے متعلق باتوں سے کریں۔ اگر ہم اس طرح سے بچوں کی تعلیم کا آغاز کریں گے تو یہ ضرور بچوں کو حفظ قرآن کریم کی طرف مائل کرنے میں معاون ہوگا۔

عمر کے لحاظ سے قرآنی کلمات کی تلاش کا کام:

بچے ابتدائی سالوں میں الفاظ کے معانی کو جاننے کے شوقین ہوتے ہیں، بچوں کی کوشش ہوتی ہے کہ ہر نئے لفظ کو سیکھیں اور اسے جملوں میں استعمال کریں، ہم بچوں کے اس شوق میں قرآن کریم کے الفاظ کے ساتھ بھر پور حصہ لے سکتے ہیں، مثال کے طور پر تیسویں پارے کی آخری سورتوں میں سے بچوں سے پوچھا جائے: لفظ قریش کس سورہ میں ہے؟ اور لفظ “تین” اور” زیتون” کس سورہ میں ہیں وغیرہ؛ ہمارا یہ عمل بچوں کو ان سورتوں کے حفظ کرنے پر ضرور آمادہ کرے گا۔

ہر وقت قرآن کریم کا نسخہ ساتھ رکھنے پر آمادہ کرنا:

مثال کے طور پر ہم انھیں چھوٹے سائز کے قرآن کریم کا خوبصورت نسخہ ہدیہ دیں، اور انھیں صبح وشام ساتھ رکھنے کی ترغیب دیں، ساتھ رکھنا ان کے لیے نہ صرف باعث اطمینان وبرکت ہوگا بلکہ ہر قسم کے شرور سے ان کی حفاظت بھی ہوگی، اس عمل سے بچوں میں قرآن کریم کے ادب کو ملحوظ رکھنے کے ساتھ ساتھ اسے سینوں میں محفوظ کرنے کا جذبہ بھی پیدا ہوگا۔

قرآن کریم سے متعلق خصوصی چینل دیکھنے کی ترغیب، خاص طور پر حفظ قرآن کے مسابقات: جب بچے اپنے ہم عمر بچوں کو مسابقوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہوئے اور انعام پاتے ہوئے دیکھیں گے تو ان میں بھی حفظ قرآن کا جذبہ کار فرما ہوگا، بچے یہ سوچنے پر مجبور ہونگے کہ وہ بھی ان انعام یافتہ بچوں کی طرح یا ان سے ممتازاور اچھے بن سکتے ہیں۔

حفظ قرآن کے لیے موجودہ جدید ذرائع کا استعمال:

بہت سے بچے جدید ذرائع کو حاصل کرنے کے شوقین ہوتے ہیں، اگر ہم بچوں کو قرآن کے حفظ کے لیے دستیاب جدید ذرائع مہیا کریں اور انھیں اس کے استعمال کی ترغیب دیں تو اس سے بچوں کو کئی فائدے ہونگے، وہ قرآن کریم کو خوش اسلوبی سے پڑھ سکتے ہیں، اپنی غلطیوں کی نشاندہی کرسکتے ہیں اور اپنے لہجے کو اچھے سے اچھا بنانے کی کوشش کرسکتے ہیں۔ آج کل بازار میں متعدد قراءکی تلاوتوں پر مشتمل سستے داموں میں ڈیجیٹل قرآن کریم دستیاب ہیں۔

بچوں کو اپنی قرا ت ریکارڈ کرانے کی ترغیب:

یہ عمل بچوں میں خوداعتمادی پیدا کرنے کا باعث ہے، اس سے بچوں میں یہ جذبہ پیدا ہوگا کہ وہ بھی عمدہ لہجے میں قرآن کریم کی تلاوت کرسکتے ہیں، اور معروف قرا ءکے لہجے کی نقل کرسکتے ہیں۔

بچوں سے تلاوت اور قرآنی قصوں کو بغور سننا:

مربی اور سرپرست حضرات کو اس سلسلے میں مکمل توجہ دینی چاہیے کہ جب بچے تلاوت کررہے ہوں یا قرآنی قصے بیان کررہے ہوں تو بغور سماعت کریں ، جس سے بچوں کو حوصلہ ملے گا اور ان کے اعتماد میں اضافہ ہوگا۔

گھر میں ایک دوسرے کی امامت پر ہمت افزائی کرنا:

گھر میں جب سب بچے اور ان کے پڑوسی دوست واحباب جمع ہوں تو سب کو ایک ساتھ نماز پڑھنے کی ترغیب دینا اور ان میں سے جو قرآن کریم اچھا پڑھتا ہو اسے امام بنانا، یہ عمل بچوں میں حفظ قرآن کا جذبہ پیدا کرنے میں معاون ثابت ہوگا۔

گھر میں قرآن کریم کی ہفتہ وار مجلس کا اہتمام:

خاندان کے تمام افراد کو گھرمیں ہفتہ وار قرآن کریم کی مجلس میں ایک دوسرے کا تعاون کرنا چاہیے، اور اس مجلس میں پورے شوق اور احترام کے ساتھ شرکت کریں تاکہ یہ مجالس گھر کے بچوں کے اندر حفظ قرآن کریم سے لگاو کا سبب بن سکیں۔

مسجد کے حلقے میں شرکت :

والدین اپنے بچوں کو قریبی مسجد کے تعلیمی حلقوں میں بیٹھنے کی ترغیب دیں، بچوں کی زندگی میں ان حلقوں کی بے پناہ اہمیت ہے، کیونکہ ان حلقوں کے ذریعے ہی بچے اپنے ہم جماعت طلباءکے ساتھ مقابلہ کے لیے تیار ہوتے ہیں، اور ان حلقوں میں تجوید وقرات میں بھی مہارت حاصل کرسکتے ہیں۔

آسان لغتوں میں قرآن کے الفاظ کے معانی تلاش کرنے پر ہمت افزائی کرنا:

اس کی وجہ سے بچوں کے قرآنی الفاظ کے ذخیرے میں اضافہ ہوگا جو ان کے لیے حفظ قرآن کریم میں معاون ثابت ہوگا۔

بچوں کو تفسیر کی آسان کتابوں کے مطالعہ کی ترغیب :

قرآن مجید کی ایک ایک آیت کی تفسیر کا علم بچے کو حفظ کرنے پر آمادہ کرے گا، خصوصا قرآن مجید میں قصوں والی آیات اور چھوٹی چھوٹی سورتوں کی تفسیر کے مطالعہ پر توجہ دی جائے۔

علم کی محفلیں بچوں کے لیے قرآن کریم کی طرف راہیں ہموار کرتی ہیں:

کتنے بچوں کے واقعات سامنے آئے ہیں جنھوں نے اپنے والدین کے ساتھ علمی محفلوں میں شرکت کی، حالانکہ قرآن کریم سے ان کا کوئی تعلق نہیں تھا، لیکن صرف محفلوں میں شرکت نے ان بچوں کے ذہنوں میں قرآن سے متعلق سوالات پیدا کیے، اوران کو والدین کے ساتھ قرآنی محفلوں سے متعلق بات چیت کرنے پر آمادہ کیا، سوالات وجوابات کے نتیجے میں وہ بچے علم وفن کے عظیم درجات تک پہنچ گئے۔

بچے کے سامنے میں قرآنی اصطلاحات کو بار بار دہرانا:

مثال کے طور پر اگر ہم بچے کو تقوی سے متعلق یاد دہانی کرائیں تو قرآن کی آیت ان اللہ مع الذین ا تقوا [النحل: 128] ”یقین مانو کہ اللہ تعالیٰ پرہیزگاروں اور نیک کاروں کے ساتھ ہے “۔پڑھ کر اس کی رہنمائی کرے، اگر والدین کی اطاعت سے متعلق انھیں یاد دہانی کراونا ہو تو قرآنی آیت وبالوالدین احسانا [البقرة: 83]، ”اور والدین کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آو“پڑھ کر ان کی یومیہ زندگی میں خیر و شر کی جانب رہنمائی کرتے رہیں۔

بچہ کے حفظ قرآن میں معاون بعض ہدایات:

٭شدت اور سختی کی بجائے ترغیب اور شوق پیدا کریں۔

٭ہمت افزائی اور حوصلہ کے لیے انعامات کا اہتمام کریں

٭دیگر بچوں کے ساتھ شریفانہ مقابلہ اور اجتماعی تعلیم کا اہتمام کریں۔

٭قرآن سے ہی اور قرآن کے ذریعہ ہی تعلیم کا آغاز کریں۔

٭مسلسل صبر اور استقامت سے کام لیں۔

٭مسلسل دعاوں کا اہتمام کریں۔

٭٭٭
By: Dr shaikh wali khan almuzaffar, Karachi on Jul, 24 2016

منفی سوچوں کی ڈھال تعلیم ہے
jab tak Pakistan me taleem ka dohra miyar qaim hy us waqt tak taleem ka te haal rahe ga ap ka article bhut hi achha hy
By: faiz Ahmed, karachi on Jul, 17 2016

Why Education Is Necessary
education is like our both eyes. no one can succeed without education
By: akilan , kumbakonam on Jul, 15 2016

Co education advantages and disadvantages
overall it is just a good . but needs a lot of improvement in writing and th eway you present your idea brother
By: naeem awan , peshawar on Jul, 11 2016

Advantages Of Cost Accounting
wow well done work.....I appreciate
By: NELSON GETANDA, NAIROBI on Jul, 04 2016

پرائیویٹ تعلیمی ادارے اور بچوں کا مستقبل
I agree
By: Syed Ali Haider, Sialkot on Jun, 28 2016

نگران برائے فرخت
Nice
By: M.hussain, Karachi on Jun, 26 2016

پروفیسر ڈاکٹر خالد محمود: تحقیق کے حوالے سے ایک مکالمہ
Research oriented topic
By: M. Arshad Abbasi, sargodha on Jun, 09 2016

لبید کا حفظ قرآن
طريقة عجيبة لحفظ القرآن بسهولة وذاكرة قوية
‏30 سبتمبر، 2010‏، الساعة ‏03:40 مساءً‏
احضر ورقة واكتب في أعلاها هدفك وهو
"أنا أحفظ القرآن كاملاً بعون الله"
ولكي يتحقق الهدف عليك بأربعة أمور أساسية لابد من توفرها للحافظ وهي كالتالي:

أولاً: لا تشك أبداً بأنك لن تحفظ وتأكد من نفسك أنك ستحقق هذا الهدف، الرجاء هذا الجانب لا يهمل

إطلاقاً.

ثانيا: ضع لنفسك نموذج، أي إنسان يكون قدوة ولا أحد أجدر بالقدوة من رسولنا الكريم محمد
فى القرآن الكريم وامورنا كلها.

ثالثاً: دون كل ما سيحدث إن حفظت القرآن،من تذكر ثواب الحفظ وتذكر قول الله (اقرأ وارتق ورتل كما

كنت ترتل ... الحديث"

رابعاً: كلما حفظت وتقدمت في الحفظ قدم لنفسك هدية فعندما تحفظ سورة البقرة قدم لنفسك هدية عينية

حتى تواصل الحفظ.

العوامل المؤثرة

جميع الناس تحكمهم دوافعهم التي غرسوها في نفوسهم ، فنجد من يحصل على شهادة الدكتوراه ومن

يصبح مهندساً رائداً ومن يصبح طبيباً ناجحاً من بين أصدقائه الذين درسوا معه على الرغم من أنهم

تلقوا العلم الذي تلقى هو. فالدافع هو العامل المهم الذي يؤثر على النفس البشرية. دعنا نتخيل ونتصور

أن أحد أصدقائك طلب منك شخصياً أن تحفظ ألف صفحة كاملة في مدة قدرها أسبوع فقط، فإن مما

لاشك فيه تجد ذلك مستحيلاً تماماً، لأن ذلك يعد بالنسبة لديك متعب ومرهق، ولكن افترض لو قال لك لو

حفظت تلك الصفحات، منحتك جائزة قدرها عشرة ملايين، فماذا ستصنع؟ إنه العامل الخارجي المؤثر،

فلو وجد لديك عوامل خارجية محفزة كان ذلك أفضل والواقع يشهد أنك لن تجد خير من ((جَنَّةٍ عَرْضُهَا

السَّمَاوَاتُ وَالأَرْضُ أُعِدَّتْ لِلْمُتَّقِينَ ))إدارة الوقت

حتى نتمكن من الحفظ، لابد علينا أن نرتب أمورنا لنوفر لفترة الحفظ الوقت الكافي، فأفضل طريقة

لترتيب الأعمال هي عمل جدول فقبل أن تنام أحضر ورقتين، ورقة اكتب فيها جميع الأعمال التي ستقوم

بها في الغد ، وبعد ذلك في الورقة الأخرى ارسم جدول ذي ثلاثة أعمدة واكتب في رأس كل عمود ما

يلي : الأعمال المهمة ، الأعمال الأقل أهمية، والأعمال الغير مهمة، واكتب تحت كل عمود العمل الذي

يندرج تحته حسب أهميته. واجعل الحفظ في قائمة الأعمال المهمة. وقم بأعمالك حسب أهميتها. واعلم

هديت أن أفضل الأوقات للحفظ هي الأسحار، في الصباح، فقد قرأت أن قوة العقل على الحفظ في وقت

السحر من أربعة إلى ثمان ساعات وبراحة تامة وذلك لأن المعدة تكون خالية إلى حد ما وستعرف ما

هي أهمية أن تكون المعدة خالية.

المكان الأنسب للحفظ

ربما قد حددت المكان الذي ستحفظ فيه القرآن، ولكن لم تعطي اهتماماً بما يحويه هذا المكان من

مؤثرات تشد الانتباه، فعندما يكون المكان مجرد لا يحوي صوراً ولا أثاث ولا أصوات ، يكون الحفظ

أسهل لأنه لا يوجد هناك ما يشد الانتباه للنظر والتأمل فيه، فكثير من الناس يستلقي مثلاً ويبدأ في الحفظ

وبعد مدة ليست بالطويلة ينظر إلى السقف ويتأمل فيه ويسهو عن الحفظ، فالطريقة المثلى لاختيار

المكان هو أن تجلس أمام جدار أبيض نظيف كأن تجلس في أول المسجد وتوجه بنظرك في المقدمة،

ففي تركيا، لحفظة القرآن حجيرات يجلس الطالب فيها لوحده ويحفظ، ويشترط أن يكون المكان بعيداً عن

الأصوات، فالصوت يشد ويؤثر على العقل بشكل كبير، وأن يكون المكان ذو تهوية جيدة حتى يكون

الحافظ في أحسن حال غير متوتر ولا ضيق الصدر.

التنفس العميق

قبل الشروع في الحفظ تنفس بعمق،لأن بذلك التنفس تستنشق الأكسجين بشكل أكبر من العادة، فعندما

تتنفس بعمق، تكون نسبة الأكسجين المتنفسة أكبر، ويحمل الدم ذلك الأكسجين ويقوم القلب بضخة

للدماغ ، ويغذي الأكسجين الدماغ ويبدأ الدماغ بالعمل أفضل من السابق، تنفس ما يقارب ثلاثين مرة

بعمق قبل أن تحفظ. ولا تبدأ الحفظ بعد الأكل لأن الدم مشغول بعملية الهضم وأهمل الدماغ فهو لا يضخ

للدماغ إلا كميات قليلة فتجد الحفظ بعد الأكل مباشرة مرهق ومتعب لذلك فمن الأفضل أن تحفظ وأنت

فارغ المعدة أي في الصباح. وليس يعني أن تكون جائعاً، لأن الجائع يحتاج للطاقة للدماغ يحتاج للطاقة

ليحفظ، فيستهلك الدماغ ويستهلك الجسم كليهما في استخدام الطاقة الموجودة في الجسم من قبل فيؤدي

ذلك إلى الإرهاق

هيمنة التركيز

لا يخفى عليك قوة التركيز في حل المشاكل، فربما أردت حل مسألة في السابق ووجدتها معقدة، فبدأت

بالتركيز أكثر من ذي قبل، ثم وجدت نفسك بأنك استطعت أن تحلها. أعلم هُديت أن التركيز يحل نصف

المشكلة تماماً، فكلما ركزت على الصفحة أكثر، كلما قل الوقت والجهد، فعليك بالتركيز، وضع نصب

عينيك أن تركيز عشر دقائق خير من عشر ساعات فوضى بلا تركيز. وأفضل ما تصنعه كلما وجدت أنك

تسهو عن القرآن، هو أن تقول لنفسك بصوت مرتفع (ركّز) حتى يعود العقل للتركيز من جديد، فإن

وجدت أن هذا لا يجدي، قم من مكانك وقف دقيقة قرب المكان، فبهذه الطريقة تجد نفسك أنه لا يوجد

شيء ليشد انتباهك فتجد نفسك أنك تريد التكملة والتركيز كما سبق. و بعد مدة من الزمن ستجد نفسك لا

تسهو عند الحفظ لأن الرسالة تكرر على العقل الباطن وصدقها فمنحك تركيز أقوى وأكثر فعالية. وتذكر

ما تطرقنا له عندما تحدثنا عن المكان وما يحمله من تأثيرات على العقل تؤدي لشد الانتباه وتشتيت

التركيز.

التكرار

إن الطفل يخطئ في الصغر ومع التكرار يصبح قادراً على التحدث بطلاقة، فالتكرار له فوائده في

التعليم، فكلما كرر الحافظ الآية كلما زادت نسبة قوة الحفظ لديه لها وزادت نسبة طلاقته في القراءة.

فالمراجعة والتكرار لابد منهما حتى لا نفقد ما حفظناه مسبقاً، فهناك نظرية تقول أن الحافظ عندما يحفظ

في الصباح يوضع ما تم حفظه في ذاكرة مؤقتة، وعندما يراجعها في ظهر يوم الثاني أو الثالث، ترسل

الملفات إلى الذاكرة طويلة الأمد. لذلك يتطلب من الحافظ أن يراجع ويكرر كل ما حفظ من كتاب الله

وذلك في ظهر اليوم الثاني والثالث. فحافظ على المراجعة في وقت الظهيرة بعد يوم أو يومين.

الانتظام

إن بانتظامك اليومي على الحفظ ، يصبح العقل الباطن نشيط على الاستيقاظ مبكراً لتعوده على هذا

النظام ويصبح من السهل عليه الحفظ من السابق، فتجد نفسك تستيقظ مبكراً تلقائياً من دون منبه

وتحفظ بسرعة. وكما تعلم أن الرسول حث على العمل وفضلّه أن يكون دائما وليس متقطع،فقد قال

"أفضل العمل أدومه وإن قل" أو كما قال صلى الله عليه وسلم. ويقولون أن الذي يعمل في انتظام

طوال الأيام ثم يفقد يوم أو يهمله كمن كان يلف الخيوط ثم سقطت من يده وعاد من جديد، وهذا لا

يقتضي أنه إذا أصابك ظرف وتخلفت يوم أنه من الصعب عليك الاستمرار، لا بل استمر وتوكل على الله،

بل يقول بعض العلماء أن مما يدفع للاستمرار على الحفظ ان يخصص الحافظ له يوم أو يومين للراحة

والاستجمام.

تأثيرات أخرى تساعد في حفظ القرآن الكريم •

الالتزام بطبعة معينة من المصحف الشريف يساعد على حفظ أماكن الآيات، فتجد بعض الناس يقول

حين يقرأ القرآن غيباً أنه يعرف أين مكان الآية بالضبط هل هي في الأعلى أم في المنتصف أم في

الأسفل، وكلما تغيرت الطبعة التي تحفظ منها كلما تشتت العقل.

• الاستماع إلى شيخ يحسن التجويد من أهم الأمور لمن أراد أن يتقن التجويد ومن أفضل القراء الذي

أنصح بهم هم محمد صديق المنشاوي ومحمد أيوب وعلي عبدالرحمن الحذيفي.

• قراءة وحفظ القرآن بترتيل وصوت حسن يساعدك على الاستمرار في تثبيت الآيات.

• حفظ القرآن وتدبره بشكل هادئ يساعد على غرس الآيات ببطء وتأصيلها في العقل ويقاوم النسيان

المبكر للآيات.

• تخيل معاني الآية وربطها في العقل يؤدي إلى تذكر الآية بسهولة، فإن عملية الربط من أهم وسائل

الذاكرة الفورية كأن تتخيل عندما تقرأ آية ((أَوْ كَالَّذِي مَرَّ عَلَى قَرْيَةٍ وَهِيَ خَاوِيَةٌ عَلَى عُرُوشِهَا )) قرية

خربة وهامدة لا أحد فيها.

• أن ما يساعدك على الحفظ هو لزوم الطاعات واجتناب والمعاصي ولا يخفى عليكم قصة من شكى إلى

معلمه وكيع وجود صعوبة في الحفظ فأخبره أن ترك المعاصي يجل من الحفظ مهمة شاقة. وأخذ يقول

السائل:

شكوت إلى وكيع سوء حفظي فأرشدني إلى ترك المعاصي

وأخبرني بأن العـلم نـــــورٌ ونور الله لا يهدى لعاصي

• الحفظ في وقت الملل والضجر مضيعة للوقت أيما مضيعة، فإن في ذلك جهد وإرهاق بلا فائدة، التزم

الحفظ عند انشراح الصدر.

• التركيز على ما تشابه من القرآن والتمييز بينهما فمثلاً أية (( يقْتُلُونَ الأَنبِيَاءَ بِغَيْرِ حَقٍّ )) توجد في

سورة آل عمران 112 وهناك أية أخرى شبيه لها وهي (( يَقْتُلُونَ النَّبِيِّينَ بِغَيْرِ الْحَقِّ )) وتوجد في

سورة البقرة 61 وفي سورة آل عمران 21 توجد هذه الآية ((يَقْتُلُونَ النَّبِيِّينَ بِغَيْرِ حَقٍّ))

طريقة فعالة لحفظ القرآن بذاكرة طويلة الأمد

من يريد أن يحفظ القرآن الكريم بذاكرة طويلة الأمد، عليه بإتباع ما يتبعه معلمو حفظة كتاب الله في

تركيا وهي أن تحفظ في اليوم الأول أول صفحة من الجزء الأول، وفي اليوم الثاني تحفظ أول صفحة من

الجزء الثاني وهكذا حتى تكمل جميع الصفحات الأولى لجميع الأجزاء، وعندما تنتهي منها، تقوم بحفظ

الصفحة الثانية من الجزء الأول ثم من الجزء الثاني وهكذا حتى تختم القرآن، وعندما تنتهي تقوم بربط

الصفحات ببعضها البعض بتكرار أخر آية من الصفحة الأولى وأول آية من الصفحة الثانية. والحكمة

من هذه الطريقة أنها تساعد الطالب على الراحة والاستمرار في الحفظ، لأن طبيعة النفس البشرية تحب

التنويع، فالتنقل بين السور المدنية إلى المكية والعكس يحدث تنويع أفكار السور، فمثلاً ربما يقرأ في

سورة عن قصة وفي أخرى عن حكم وفي ثالثة عن ترهيب وفي رابعة عن ترغيب، فهو يتنقل بينهما في

رحلته تجاه حفظ القرآن.

طريقة فعالة للمراجعة والحفظ بسرعة

وهي قبل أن تبدأ في حفظ الصفحة، عليك أولاً أن تقرأ الصفحة كاملة وتعرف ما تتحدث عنه، وما هي

الفكرة التي تتطرق إليها؟ وبعد ذلك تقوم بكتابة الأحرف الأولى لجميع الكلمات في تلك الصفحة مرتبة

حسب المصحف. فعند المراجعة والحفظ يقوم المتعلم بقراءة الآية وعندما يتوقف و ينسى الكلمة

القادمة، يعود إلى حروفه ويعرف ما هو أول حرف تبدأ به تلك الكلمة ويتذكر الكلمة بإذن الله، وعندما

يجد صعوبة في التذكر، يراجعها في القرآن ولن ينساها بعد ذلك بعون الله. ونضرب على ذلك المثال

حتى تتبين الفكرة فمثلاً آية "إنا أعطيناك الكوثر" نكتب في دفتر ملاحظاتنا الأحرف الأولى للكلمات

فستكون كالتالي " إ - أ - الك " فيمكننا إضافة ((أل التعريف)) كاملة مع الحرف التالي وأيضا يمكننا

كتابة لفظ الجلالة ((الله)) كاملاً، فعندما يقوم الحافظ بالمراجعة وينسى كلمة "الكوثر" فإنه سيعود

لدفتره فيرى حرف "الك" ويعرف إن الكلمة تبدأ بذلك الحرف فيتذكر.

طلب

أرجو من كل من امتلك هذه الصفحات أن يصورها وينشرها لمن يعتقد أنها ستفيده إن ظن أنه لن ينتفع

منها ، فلربما حفظ القرآن أحد المسلمين أو أكثر من ذلك وكنت سبباً في تيسير هذه الصفحات له، وتذكر

أنك كلما نشرت أكثر، كلما زادت فرصتك للفوز بالحسنات، فكلنا يعلم حديث الرسول " الدال على

الخير كفاعله"

ودمتم سالمين حافظين

للقران الكريم
By: Dr shaikh wali khan almuzaffar, Karachi on Jun, 02 2016

MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB