عیدالفطر کیسے منائی جائے؟ چند قیمتی تجاویز

 

ماہ رمضان کے اختتام پر یکم شوال کو عید الفطر کا تہوار مسلمانوں کے لیے خوشیوں کا پیغام لے کر آتا ہے اور مسلمان اس تہوار کا استقبال انتہائی جوش و خروش اور گرمجوشی کے ساتھ کرتے ہیں- تاہم ایک بڑی اکثریت کے نزدیک عید صرف ایک پارٹی کا نام ہے جس میں نئے کپڑے پہننا٬ عیدی وصولنا اور دوستوں کے ساتھ تفریح کرنا شامل ہے- اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ تمام امور بھی عید ہی کا ایک خاص حصہ ہیں لیکن عید کی چند مذہبی اور معاشرتی اقدار بھی موجود ہیں جنہیں یاد رکھنا لازمی ہے- ہم یہاں آپ کو چند ایسی تجاویز سے آگاہ کریں گے جن پر عمل کر کے آپ نہ صرف اپنے عید کے یہ قیمتی لمحات ہمیشہ کے لیے یادگار بنا سکتے ہیں بلکہ آپ کی مذہبی اور معاشرتی روایات بھی زندہ رہیں گی-
 

عید ایک انعام
عیدالفطر اﷲ تعالیٰ کی جانب سے مسلمانوں کے لیے ایک انعام ہے جو کہ انہیں رمضان المبارک کے اختتام پر دیا جاتا ہے- مسلمان رمضان المبارک کے پورے ماہ اﷲ تعالیٰ کی عبادات میں مشغول رہتے ہیں اور اﷲ تعالیٰ کی جانب سے مسلمانوں کو عید کی شکل ایک خوشیوں بھرا تحفہ عطا کیا جاتا ہے- اس روز مسلمانوں پر رحمتیں اور برکتیں نازل کی جاتی ہیں-


نیا لباس پہنیے
غسل کرنا اور نیا لباس زیب تن کرنا عید کی خصوصی روایات ہیں- ایسے افراد جو نیا اور بہترین لباس خریدنے کی استطاعت رکھتے ہیں انہیں ضرور نیا لباس پہننا چاہیے اور غیر ضروری کنجوسی سے گریز کرنا چاہیے- تاہم جو لوگ یہ استطاعت نہیں رکھتے انہیں بھی چاہیے کہ وہ ایسا لباس پہنیں جو اگر نیا نہ بھی ہو تو کم از کم صاف ستھرا اور بہتر ضرور ہو- اگر اس سال عید پر اپنے پیاروں کے بچھڑنے کا غم ہے تو بھی آپ اداسی کو اپنے اوپر طاری نہ کیجیے اور نہ ہی سوگ کا ماحول بنائیے- عید کا گرمجوشی سے استقبال کیجیے اور خداوند کریم کی جانب سے عطا کردہ اس انمول تحفے کی قدر کیجیے-


فطرہ ادا کرنا ضروری ہے
عید کی خوشیوں میں غریب اور ضرورت مند افراد کو ہرگز نہ بھولیے- عید کی نماز ادا کرنے سے قبل صدقہ فطر مستحقین تک ضرور پہنچا دیجیے تاکہ ان کے لیے بھی یہ دن خوشیوں کا پیغام ساتھ لے کر آئے-


عید کی نماز
عید کی نماز صبح سویرے مختلف مساجد اور عیدگاہوں میں ادا کی جاتی ہے- یہ نماز مختلف علاقوں میں مختلف اوقات میں ادا کی جاتی ہے- اس روز اﷲ کی رحمتوں اور برکتوں کا شکر ادا کرنے کے لیے عید کی نماز اور خطبہ سننا نہایت ضروری ہے- نماز کی ادائیگی کے بعد عیدگاہ میں بھی لوگوں سے گلے ملیے اور انہیں عید کی مبارک باد دیجیے- آپ کا یہ عمل آپس میں محبت بڑھانے اور بھائی چارگی میں اضافے کا باعث بنے گا-


عیدی اور تحائف
عیدالفطر کی سب سے خصوصی چیز “ عیدی “ ہوتی ہے- عید کی نماز ادا کرنے کے بعد اپنے چھوٹے اور بزرگوں دونوں کو ہی عیدی یا تحائف ضرور دیجیے- ضروری نہیں ہے کہ آپ عیدی کے لیے بہت بڑی رقوم کا انتخاب کریں جو آپ کو خود پریشانی میں مبتلا کردے بلکہ آپ اپنی استطاعت کے مطابق بھی اپنے اہلِ خانہ میں یہ خوشی تقسیم کرسکتے ہیں- تاہم اس موقع پر گھر کے ملازمین اور دیگر افراد کو بھی یاد رکھیں اور انہیں بھی عیدی دے کر اپنی اس خوشی میں شامل کیجیے-


ناراض رشتے داروں کو منائیے
عید ناراض رشتے داروں اور دوستوں کو منانے کا بہترین موقع ہے- آپ کسی کا انتظار مت کیجیے اور خود آگے بڑھ کر ناراض دوستوں یا رشتے داروں کو راضی کیجیے اور آپس کی غلط فہمیوں کو دور کرلیجیے- اﷲ تعالیٰ اس عمل سے انتہائی خوش ہوتا ہے اور ایسے مسلمانوں کے گناہ معاف فرما دیتا ہے جو ایک دوسرے کو معاف کردیتے ہیں اور صرف اﷲ کی رضا کے لیے ایک دوسرے سے ملتے ہیں- آپ اگر آگے بڑھ کر کسی ناراض دوست کو گلے لگائیں گے تو اس سے نہ صرف آپ کی عزت و احترام اضافہ ہوگا بلکہ آپ کی یہ عید بھی ہمیشہ کے لیے یادگار بن جائے گی-


پکنک یا کھانے کا پروگرام
چونکہ عید کے موقع پر تین یا چار روز کی چھٹیاں ضرور میسر آتی ہیں تو آپ کو چاہیے کہ اس موقع کو غنیمت جانتے ہوئے کسی ایک دن اپنے گھر والوں کو کھانے پر باہر لے جائیے اور کچھ وقت ان کے ساتھ گزاریے- اس کے علاوہ اکثر لوگ اس موقع پر پکنک کا پروگرام بھی بنالیتے ہیں جو کہ انتہائی پرلطف رہتا ہے- اور یہ ایک بہترین موقع بھی ہوتا ہے کہ عید کے ان دنوں تمام رشتے دار یا دوست وغیرہ ایک ہی جگہ پر مل جاتے ہیں-


عید ہماری ویب کے ساتھ
اگر آپ عید کے دن گھر پر کسی مہمان کا انتظار کر رہے ہیں تو انتظار کی کوفت سے بچنے کے لیے ہماری ویب کے ساتھ منسلک ہوجائیے- یہاں آپ مختلف دلچسپ اور معلوماتی آرٹیکل٬ شاعری٬ مزاحیہ ویڈیو اور مزیدار کھانوں کی تراکیب دیکھ سکتے ہیں- یوں آپ کا یہ وقت ضائع ہونے کے بجائے انمول ہوجائے گا اور آپ کی معلومات میں اضافے کے باعث بن جائے گا-

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
25 Jun, 2017 Total Views: 5354 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
DURING FASTING SO MANY OFFICES ARE WORKING ON HUMAN- BODY.IT IS HARD TO NAME THEM SEPARATELY AND IT IS HARD TO VALUE THEM IN INDIVIDUALLY, YOU ARE ASKED ONLY TO OBEY THE COMMAND.MUSLIMS ARE HELPED BY*ALLAH SWT* TO GO THROUGH FASTING OTHERWISE IT IS NOT POSSIBLE FOR HUMAN TO ENDURE EVEN ONE FAST.DURING FASTING MONTH MUSLIMS ARE TAUGHT HOW TO CLEAR THE ROUTE TO THE NEXT LIFE.FINAL TOUCHES ARE OBSERVED BY SOME MUSLIMS FOR THE REST OF UMMAH.TO MARK THE END OF RAMADAN,EID FESTIVAL IS CELEBRATED.TO CELEBRATE BUSINESSES ARE GEARED TO FULFILL NEED OF THE PUBLIC AT LARGE.FINAL SEGMENT EID -PRAYER MUSLIMS ARE BROUGHT IN OPEN COURTS.JUST TO PRAY EID FITRANA FEE HAS TO BE RENDERED OTHER WISE YOUR ALL THE WORSHIPS ARE SUSPENDED IN THE SPACE. AFTER PRAYER EXCHANGE THE GREETING WITH YOUR FELLOW MUSLIMS.EVERY -BODY WILL DISCHARGE HIS OR HER DUTY
By: IFTIKHAR AHMED KHAN, CALGARY ALBERTA CANADA on Jul, 05 2016
Reply Reply
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
The most awaited day of the year, Eid ul Fitr has finally arrived. Welcome the dawn of Eid in your city with open arms and praise Almighty Allah for the unlimited blessings. For most of us Eid means “party”! To dress up nicely, collect Eidi, have a family dinner and hang out with friends. Is that enough? Not really! We all have heard of the “Mazhabbi Josh o Jazba” on TV but most of us are unaware of it in real terms.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB