وزیراعلیٰ کے دفاتر اور عوام کی خواری

(Rohail Akbar, Lahore)

فقیر حسین زندگی کی75بہاریں دیکھ چکا ہے بھکر کی تحصیل کلور کوٹ کے گاؤں 57۔ڈی بی کا رہائیشی ہے تقریبا40سال قبل پیپلز پارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹونے نے اپنے دور اقتدار میں غریب اور بے زمین کسانوں کو ساڑھے باری ایکڑ زمین الاٹ کی تھی اور فقیر حسین کو بھی اسی گاؤں میں غیر آباد اور بنجر زمین الاٹ کردی گئی مزدور اور محنت کش فقیر حسین نے سخت محنت کے بعد دو ایکڑ زمین آباد کرکے فصل بیج دی اور خود گھر کے اخراجات پورے کرنے کے لیے کراچی میں محنت مزدوری کرنے چل پڑا شہر میں ابھی پہلا ہی روز تھا کہ کسی ہمدرد نے کھانے کے لیے کوئی چیز دی جسے کھاتے ہی فقیر حسین بے ہوش ہوگیا جب ہوش آیا تو خود کو ایک پہاڑی علاقے میں پایا جہاں پر اس جیسے اور بھی بہت سے افراد موجود تھے جنہیں صبح پتھر توڑنے کے کام پر لگادیا جاتا اور شام کو پاؤں میں زنجیریں ڈال کر جانوروں کی طرح باندھ دیا جاتامسلسل 9سال تک پتھر توڑتے توڑتے ایک رات فقیر حسین کو بھاگنے کا موقعہ مل گیا اور وہ مسلسل 17روز پیدل چلتا رہاپیسے نہ ہونے کے باعث بغیر کچھ کھائے مسلسل چھ دن گذرنے کے بعد ساتویں دن کسی نیک دل خاتون نے ترس کھاتے ہوئے ایک روٹی دی اور پھر کراچی پہنچ گیا کسی سے کرایہ کے پیسے لیکر واپس اپنے گاؤں پہنچا تو وہاں کی دنیاہی بدل چکی تھی دو بیٹے پیسے نہ ہونے کی وجہ سے مناسب علاج نہ ہونے پر انتقال کرچکے تھے والدین بیٹے کے انتظار میں دنیا سے کوچ کرگئے جبکہ گاؤں والے اور رشتہ دار اسے مردہ قرار دے کر ختم وغیرہ دلا چکے تھے مشکلات تھی کہ کم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی اسی علاقے کے ایک قبضہ گروپ نے اسکی زمین پر قبضہ کرلیا تھااور پھر شوہر کے ہوتے ہوئے بیگم بھی مزید صدمے برداشت نہ کرسکی اور دنیا فانی سے کوچ کرگئی فقیر حسین نے اپنی زندگی کی آخری امید اپنی زمین کو قبضہ گروپوں سے چھڑوانے کے لیے عدالت میں کیس دائر کردیا اور اپنی زندگی کی محرومیوں کو ختم کرنے کے لیے شادی کرلی جس سے ایک بیٹی پیدا ہوئی اور وہ بھی اب 30 سال کی ہوچکی ہے بچی کی پیدائش سے قبل ہی فقیر حسین اپنی زمین قبضہ گرویوں سے چھڑوانے کے لیے پہلے بھکر اور بعد میں لاہور میں مارا مارا پھرتا رہا دربار داتا صاحب سے لنگر کھا کر پیٹ بھر لیتا کسی نہ کسی جگہ مزدوری کرکے رات بھی دربار کے احاطہ میں سو جاتا مگر قبضہ گروپ بااثر ہونے کی وجہ سے تاریخ پر تاریخ پڑتی رہی اور بم دھماکوں نے لاہور سمیت پورے ملک کے حالات خراب کردیے پولیس نے دربار داتا صاحب کے احاطہ میں سونے والوں کو تنگ کرنا شروع کردیا کسی کو پکڑ کر کسی نامعلوم مقدمہ میں جیل بھجوا دیا اور کسی کو ویسے بھگا دیااس سختی کے بعد فقیر حسین کے پاس بھی کوئی رہنے کا ٹھکانہ نہ رہا تو وہ واپس اپنے گاؤں چلا گیا 35سال ہوگئے کیس لڑتے ہوئے ہر ماہ پیشی بھگتنے وہ بھکر سے لاہور پہنچتا ہے یہاں تک آنے کا صرف کرایہ ہوتا ہے وہ بھی کسی نہ کسی سے ادھار کی شکل میں ملتا ہے اور واپس پھر جانے کے لیے فقیر حسین کو کم از کم چار یا پانچ دن لاہور میں رکنا پڑتا ہے بڑی مشکل سے واپسی کا کرایہ اکٹھا ہوتا ہے تو پھر واپس اپنے گاؤں چلا جاتا ہے میری فقیر حسین سے ملاقات بدھ کے روز کلب چوک میں واقع وزیراعلی کے دفاتر کے باہر مین گیٹ کے قریب ہوئی جہاں پر وہ انصاف کے حصول کے لیے لکھی ہوئی درخواست ہاتھ میں پکڑے اندر جانے کے لیے بے قرار تھا میں نے وہاں پر لائن میں ایک سو سے زائد افراد کو دیکھ کر ان میں سے چند افراد کے ساتھ بات کی کہ آپ لوگ یہاں پر کیوں اور کب سے کھڑے ہیں اور کس سے ملنا ہے ان میں سے اکثریت کو یہ تو معلوم ہی نہیں تھا کہ انہوں نے کس سے ملنا ہے مگر اتنا سب کو معلوم تھا کہ یہاں پر وزیراعلی پنجاب نے عوام کی مشکلات کے حل کے لیے شکایت سیل بنا رکھا ہے جنہیں وہ اپنی مشکلات کے حل کے لیے درخواست دینگے اور انکے مسائل فوری حل ہوجائیں گے مگر یہ نادان اور ناسمجھ لوگ نہیں جانتے کہ انکے اپنے ووٹ کے زریعے برسراقتدار حکمران انہیں تکلیف میں رکھ کر خود مزے اور سکون سے زندگی کے مزے لوٹ رہے ہیں اور جو انہیں اقتدار کے ایوانوں تک پہنچاتے ہیں وہ اپنی پوری زندگی ایک چھوٹے سے مسئلہ کو حل کروانے کے لیے کبھی لمبی لائنوں میں لگ کر شکایت سیل پہنچتے ہیں تو کبھی پولیس کے دھکے اور گالی گلوچ برداشت کرکے زندگی کی تلخیوں کو پیتے ہیں وزیراعلی کے دفاتر آنے والے سینکڑوں افراد کا تعلق پنجاب کے دور دراز کے علاقوں سے ہوتا ہے اور مسلسل 8اور 10 گھنٹے سفر کے بعد جب یہ مظلوم اور حالات کے پسے ہوئے افراد کلب چوک مین گیٹ پر پہنچتے ہیں تو یہاں پر حکمرانوں کی سیکیورٹی کے نام پر انہیں خوب ذلیل وخوار کیا جاتا ہے دو یا تین گھنٹے کی کھجل خواری کے بعد جب یہ کسی کے پا س اپنی شکایت لیکر پہنچتے ہیں تو وہ بھی اپنے روایتی انداز میں درخواست انہیں افراد کو مارک کردیتے ہیں جن کے خلاف انکی شکایت ہوتی ہے فقیر حسین بھی انہی فریادیوں میں سے ایک تھا جس پر میری نظر ٹہر گئی میں نے فقیر حسین سمیت وہاں پر متعدد بزرگ افراد سے بات کی تو تقریبا سب کے مسائل ایک جیسے ہی تھے میں نے ان مظلوم افراد کی بے بسی اور حکمرانوں کی بے حسی پر سٹوری تیار کی اور اخبار میں دیدی اگلے دن اسی خبر پر5۔کلب روڈ پر موجود ایک دفتر میں میٹنگ ہورہی تھی اور قدرتی طور پر میں بھی وہاں موجود تھا وہاں پر وزیراعلی شکایت سیل کے تین ارکان اور ایک ڈی ایس پی بیٹھے ہوئے تھے جو اپنے اندر کاغصہ خبر لگانے والے پر اتار کردلی سکون محسوس کررہے تھے بلکہ ایسی خبریں لگانے والے تمام صحافیوں کے متعلق نازیبا الفاظ استعمال کرنا شروع کردیے جنہیں میں اگر لکھ دوں تو ایک نئی جنگ شروع ہوجائیگی مجھ سے کسی کی بھی شناسائی نہ ہونے کی وجہ سے وہ خبر اور خبر لگانے والے کے متعلق بے ہودہ گفتگو کرتے رہے مگر عوام کے مسائل کے حوالہ سے کوئی اقدام نہیں کیا وزیر اعلی کے ان دفاتر میں وزیراعلی میاں شہباز شریف صاحب تو آج تک نہیں آئے مگر ان دفاتر میں ایسے ایسے افراد کو وزیراعلی کے نام پر مراعات دے رکھی ہیں جو آج تک حکومت یا عوام کی فلاح بہبود کے لیے کوئی کام نہیں کرسکے مگر دفتر ،سٹاف ،گاڑی،پیٹرول سمیت اور بہت سی مراعات سے لطف اندوز ہورہے ہیں غریب عوام کے خون پسینے سے اکٹھا ہونے والا ٹیکسوں کا پیسہ ایسے افراد پر خرچ ہورہا ہے جنکا عوام کو فائدہ ہے نہ ہی حکومت کو بلکہ جس وزیراعلی کے وہ مشیر بنے ہوئے ہیں اس وزیراعلی کو ایک بھی مشورہ نہیں دیا اور نہ ہی ان میں سے اکثر مشیروں کی وزیراعلی سے آج تک ملاقات ہوئی ہے مگر بیوروکریسی اپنی اپنی لابی کے افراد کو نوازنے کے لیے غریب عوام کے ساتھ ظلم اور زیادتی کررہی ہے ایسے سفارشی افراد نہ تو خود کسی کام کے ہیں اور نہ ہی یہ کسی کے کام آسکتے ہیں الٹا یہ حکومت کی بدنامی کا باعث بن رہے ہیں کیونکہ راجن پور ،ڈیرہ غازی خان ،رحیم یار خان،بہاولپور ،بھکر اور لیہ سمیت پورے پنجاب سے آنے والے سائلین جن کے ووٹ سے شہباز شریف وزیراعلی بنے وہ انہی کے دروازوں پر ذلیل وخوار ہورہے ہیں اور مفاد پرست پوری مراعات کے ساتھ عوام کی خواری کا تماشا دیکھ رہے ہیں ۔

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
18 Mar, 2017 Total Views: 152 Print Article Print
NEXT 
About the Author: rohailakbar

Read More Articles by rohailakbar: 299 Articles with 60584 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB