ابن انشاء-شاعر ترا، انشاء ترا

(Rashid Ashraf, Karachi)

11 جنوری 1978 انشاء جی کی تاریخ وفات ہے، گزشہ کل گزرے اس دن کو پاکستان کے چند ٹی وی چینلز نے یاد رکھا اور خبر نشر کی لیکن کسی نے انشاء جی کی قبر کی تصویر نہ دکھائی، وجہ اس کی یہ ہے کہ انشاء جی کی قبر پر کتبہ نہیں ہے۔

کچھ عرصہ قبل شام مغرب کے وقت مشفق خواجہ صاحب کی لائبریری کا قصد تھا اور وہاں حآضری سے قبل خیال آیا کہ انشاء جی کو سلام کرلیا جائے۔ دو برس پیشتر آج ٹی وی کے ایک رپورٹر جن کو ہم جناب ابن صفی کی قبر پر لے گئے تھے، قریب سے گزرتے وقت ہاتھ کے اشارے سے کہا تھا
"یہ انشاء جی کی قبر ہے"
 


جس طرف وہ ہاتھ کا اشارہ کرتا تھا وہ قبرستان کا داخلی رستہ تھا، گاڑی چشم زدن میں اس کے سامنے سے گزر گئی تھی۔ اس روز نہ صرف انشاء جی کی بے نام و نشان قبر ملی بلکہ وہاں اطمینان سے فاتحہ پڑھنے کا موقع بھی نصیب ہوا.

سلمان علوی نے انشاء جی کے اس کلام (انشاء جی اٹھو اب کوچ کرو) کے جواب میں قتیل کی غزل ‘یہ کس نے کہا تم کوچ کرو‘ گا کر حق ادا کردیا ہے

یہ کس نے کہا تم کوچ کرو، باتیں نہ بناؤ انشا جی
یہ شہر تمہارا اپنا ہے، اسے چھوڑ نہ جاؤ انشا جی

جتنے بھی یہاں کے باسی ہیں، سب کے سب تم سے پیار کریں
کیا اِن سے بھی منہہ پھیروگے، یہ ظلم نہ ڈھاؤ انشا جی

کیا سوچ کے تم نے سینچی تھی، یہ کیسر کیاری چاہت کی
تم جن کو ہنسانے آئے تھے، اُن کو نہ رلاؤ انشا جی

تم لاکھ سیاحت کے ہو دھنی، اِک بات ہماری بھی مانو
کوئی جا کے جہاں سے آتا نہیں، اُس دیس نہ جاؤ انشا جی

بکھراتے ہو سونا حرفوں کا، تم چاندی جیسے کاغذ پر
پھر اِن میں اپنے زخموں کا، مت زہر ملاؤ انشا جی

اِک رات تو کیا وہ حشر تلک، رکھے گی کھُلا دروازے کو
کب لوٹ کے تم گھر آؤ گے، سجنی کو بتاؤ انشا جی

نہیں صرف “قتیل“ کی بات یہاں، کہیں “ساحر“ ہے کہیں “عالی“ ہے
تم اپنے پرانے یاروں سے، دامن نہ چھڑاؤ انشا جی
 


کراچی کے دوڑتے بھاگتے بے رحم ٹریفک سے بے نیاز، لب سڑک ہمارا پسندیدہ شاعر محو استراحت ہے، ایک پختہ احاطے میں خاندان کی پانچ قبریں--- کتبہ نہ ہونے کی وجہ سے عام لوگ بے خبر - ہاں مگر ایک پھول بیچنے والا باخبر نکلا

اللہ تعالٰی جنت میں درجات بلند فرمائے

تو باوفا، تو مہرباں، ہم اور تجھ سے بدگماں؟
ہم نے تو پوچھا تھا ذرا، یہ وصف کیوں ٹھہرا ترا
ہم پر یہ سختی کی نظر؟ ہم ہیں فقیر راہگزر
رستہ کبھی روکا ترا، دامن کبھی تھاما ترا
ہاں ہاں تیری صورت حسیں لیکن تو اتنا بھی نہیں
اک شخص کے اشعار سے شہرہ ہوا کیا کیا ترا

پی آئی اے کی جس فلائٹ سے انشاء جی کا تابوت آیا تھا اس کے پائلٹ نے استاد امانت علی کی آواز میں ‘انشاء جی اٹھو‘ لگادی تھی مسافر سنتے رہے اور روتے رہے تھے۔ استاد کی گائی اس غزل کو بغیر آنسو بہائے نہیں سنا جاسکتا۔
 


بند آنکھیں ہوئی جاتی ہیں پساریں پاؤں
نیند سی نیند ہمیں اب نہ جگانا لوگو
ایک ہی شب ہے طویل، اتنی طویل، اتنی طویل
اپنے ایام میں امروز نہ فردا لوگو

گلوکار فیصل لطیف نے انشاء جی کا کلام ‘سب مایا ہے‘ خوب گایا ہے، احباب اسے یوٹیوب پر سن سکتے ہیں:
Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
12 Jan, 2012 Total Views: 899 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Rashid Ashraf

Read More Articles by Rashid Ashraf: 107 Articles with 64952 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
مکرم صاحب
ہم منتظر ہیں
By: Rashid Ashraf, Karachi on Jan, 26 2012
Reply Reply
0 Like
AOA Dear Rashid.

I talked to two people about Insha Ji. Respectable, Dr Mushtaq Yusufi Sahib and Obaid Ullah Baig (both the living legends) revealed some very interesting facts about the great Insha.

Cross your fingers and pray for my wake up to collect those memoirs ! Regards and Keep writing !
By: Syed Abu Mokaarim Ahmad, Islamabad on Jan, 26 2012
Reply Reply
0 Like
Ibn e Insha cancer kay marz main mubtala thay Chaltay ho to cheen ko chaliye, Khumar e gandum mairy pasandeeda kitabain hain, in ki sha'iri parh kar andaza ho jata hai keh ye Insha Ji ki sha'iri hai, un ki sha'iri munfarid hai, Allah un ko ghareeq rehmat karay, LARK PUBLISHERS kay naam say Ibrahim Jalees kay sath bohat si kitabain bhi shaya keen.
By: Adil Hassan, Karachi on Jan, 14 2012
Reply Reply
0 Like
جناب فرحت طاہر
آپ کا بہت شکریہ
By: Rashid Ashraf, Karachi on Jan, 13 2012
Reply Reply
0 Like
good tribute to a poet!
By: farhat tahir, karachi on Jan, 12 2012
Reply Reply
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB