مکالمہ زندگی سے(تھاٹ آف دِی ڈے)

(Hukhan, karachi)

کیا اور کیوں گھور رہی ہو،،،زندگی مسکرانے لگی،،،ہلکے انداز میں بولی،،،تم
میں ہے ہی کیا،،،یا پھر تمہاری بوسیدہ سی سفید پوشاک میں بچا ہی کیا،،
ہے،،،جو دیکھا جاسکے۔

الجھے ہوئے ادھورے سے انسان ہوجیسے خزاں میں پاؤں تلےکچلے ہوئے
زرد پتے،،،چر،،،چر کرتے ہوئے،،،جیسے ماتم زدہ ہوں،،،

ہم نے زندگی کی تلخی کو کم کرنے کے لیے کہا،،،اچھا،،،سب سے ذیادہ درد،،،
کب ہوتا ہے،،،؟
وہ مسکرا کے بولی،،،تم بتادو،،،ہوا،،،یا،،،نہیں،،،،!!

ہم نے اپنی بے نور سی آنکھوں کو بند کرلیا،،،کہ وہ پڑھ نہ لے،،،! ہم بولے،،موت
اب تک آئی ہی نہیں،،،پھر کیسا درد،،،کیسا تجربہ،،،کیسا بیان،،،!

وہ ہنس کر بولی،،،میں تو تمہاری جڑواں ہوں،،کم سے کم،،مجھ سے تو جھوٹ نہ
بولو،،،،!

ہم نے اپنی زخمی روح کو،،،پردے کی اوٹ میں کرلیا،،،میری جڑواں کیسے،،،،؟،،،!

وہ غضبناک ہو کر بولی،،میں انسان نہیں ہوں،،جو جھوٹ بولوں،،یا،،،روح کو ناپاک
کر لوں،،،جب تک پیدا ہوئے تو زندہ ہوئے،،،کیونکہ میں ملی،،،ہوئی نا جڑواں،،،،؟،،!
اور سنو،،،موت کا درد،،،تکلیف سب سے ذیادہ نہیں ہوتی،،،سب سے ذیادہ تکلیف
درد،،،دکھ تب ہوتا ہے،،،جب کوئی سفید پوش بہت مجبور ہو کر ہاتھ پھیلاتاہے!
دیکھنا،،،ہر لمحے میں ہزار بار مرتا ہے،،،،!

اور،،،تم سے ذیادہ کون اس درد کو جانتا ہے،،،جھوٹ بولتے ہو،،،کہ اس کرب سے،،،
درد سے ناواقف ہو،،،

ہم نے خاموش احتجاج سے زندگی کو دیکھا،،آنکھوں نے ہمارا پردہ چاک کردیا،،،ہم
نے چہرہ دوسری جانب کرلیا،،،

وہ پھنکار کے بولی،،،دیکھا،،،کیسا درد ہوتا ہے،،،آج بھی آنکھ سے نکلے جارہا ہے
کہاں کہاں سے روکو گے،،،انسان اپنی موت پر نہیں روتا،،،مگر،،، سفید پوشی کی،،،،
موت پر خود بھی رونا پڑتا ہے،،،

درد بھی عجب ہے
جب ہو کرتا غضب ہے
ہو فولادی پھر بھی
انسان روتا ضرور ہے
یہی سفید پوشی کا اصول ہے

دروازہ کھلا رہ گیا،،،زندگی آئینہ دکھاکے چلتی بنی،،،،!!!!
 

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
25 Jan, 2018 Total Views: 717 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 929 Articles with 423011 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
Great,,,,
By: Mini, mandi bhauddin on Jan, 28 2018
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Feb, 01 2018
0 Like
bhai mubarik hu 350000 views
By: sohail memon, karachi on Jan, 26 2018
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Jan, 27 2018
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Jan, 27 2018
0 Like
bhai bhut khubh
By: rahi, karachi on Jan, 25 2018
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Jan, 27 2018
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB