نظر بھر کے نہ دیکھا کرو
Poet:
By: Hukhan, karachi

ہر روز ہمیں اک نئی کہانی سناتا ہے وہ
جانے کیوں ہمیں دیکھ کے اتنے بہانے بناتا ہے وہ
ہم دور ہوں تو زلفِ پریشان سا ہو جاتا ہے وہ
پاس ہوں ہم اگر جی بھر کے شرماتا ہے وہ
تنہائی میں خود کو ہی سب گزارشات سناتا ہے وہ
دیکھنے کو خواب ہمارے بظاہر سو جاتا ہے وہ
خواب ہو ادھورے تو اداس ہو جاتا ہے وہ
ہر روپ میں آنکھ کو ہماری بھاتا ہے وہ
خزاں میں بھی بہاروں سا نظر آتا ہے وہ
خان نظر بھر کے نہ دیکھنا اکثر بیمار پڑ جاتا ہے وہ

Rate it: Views: 38 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Sep, 2017
About the Author: Hukhan

Visit 318 Other Poetries by Hukhan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
good one its about pure love
By: khalid, karachi on Sep, 24 2017
Reply Reply to this Comment
yes thx
By: hukhan, karachi on Oct, 06 2017
thx
By: hukhan, karachi on Oct, 05 2017
nice
By: rahi, karachi on Sep, 19 2017
Reply Reply to this Comment
thx
By: hukhan, karachi on Sep, 21 2017
nice
By: rahi, karachi on Sep, 19 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.