کہا تھا میری پلکوں پر کوئی بھی
Poet: Sohail Prince
By: Sohail Prince, Bahawalpur

کہا تھا میری پلکوں پر کوئی بھی خاب مت دھرنا
تسلی مجھ کو دے دینا مگر تم پیار مت کرنا

زمانے کے ہزاروں رنگ چاہے بھر لو دامن میں
وفا کے پھول نا چننا وفا کا رنگ نا بھرنا

انا پہ بات آتی ہے جدائی جیت جاتی ہے
بہت تکلیف دیتا ہے قدم ملا کے پھر مڑنا

جو خاب اک بار ٹوٹیں اور بکھر جاہیں گر جاناں
سنو مشکل سا ہوتا ہے پھر ان کا ٹوٹ کر جڑنا

یہ دل گر ضد پہ اڑ جائے یا قربت دل کی بڑھ جائے
بہت دشوار لگتا ہے زرا سا فیصلہ کرنا

Rate it: Views: 19 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 15 May, 2017
About the Author: Sohail Prince

Visit Other Poetries by Sohail Prince »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
yeh poetry sagar haider abbasi ki hai ap ne poet sohail apna naam kion likha poet ki jaga fake poet
By: Kiran Sheikh, karachi on May, 18 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.