پیسہ
Poet: سمیرہ اطہر
By: Sumaira Athar, Bihar

ہنساتا ہے پیسہ
رلاتا ہے پیسہ

ذلیل و خوار ہوتے ہیں وہ
نہ ہو جن کے پاس پیسہ

دوستی کا سبب بھی پیسہ
دشمنی کی وجہ بھی پیسہ

ہر محفل کی جان پیسہ
ہر پارٹی کی شان پیسہ

ہر خوشی کی آن پیسہ
ہر مستی کی پہچان پیسہ

مجبور بھی کردے پیسہ
مغرور بھی کردے پیسہ

برتھ ڈے ہو یا فریشر
ہر تقریب کی ہے مانگ پیسہ

نہ دینے پہ رلاتے لوگ
دے دو تو خوش ہوجاتے لوگ

پیسوں کی قدر تب آتی ہے سمجھ
چھن جائے کبھی جب ہم سے پیسہ

بغیر پیسوں کے کچھ نہں زندگی میں
سب کچھ ہے زمانے میں بس پیسہ

سمیرہ کی زندگی کا ایک ہی تلخ تجربہ
دنیا حسیں ہے جب تک ہو پاس پیسہ

Rate it: Views: 3 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 01 Mar, 2017
About the Author: Sumaira Athar

Visit 6 Other Poetries by Sumaira Athar »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Ye Matlab ki hai duniya,
Kuan kiska Hota hai,
sab use puchhte hain,
jiske pass PAISA hota.

#Friendship/Relationship is most important then Paisa.

#Respect friends.

Q k Wo wapas ni Milte.
By: RAZA, QATAR on Mar, 03 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.