اے بارشو نہ برسو اتنا کہ جل رہا ہے کوئی
Poet: Majassaf Imran
By: Majassaf Imran, Gujrat

اے بارشو نہ برسو اتنا کہ جل رہا ہے کوئی کچھ تو خیال کرو
دَرد کے بِستر پہ پڑا ہوں کچا ہے میرا مُکاں کچھ تو خیال کرو

کیا بتاؤں زہر سی لگتی ہے تیری چھنکار مجھے اے بارش
کوئی سِسک رہا ہے تم بَرس رہے ہو کچھ تو خیال کرو

میو کَش ہوں کس میں ہے زمانہ بھی باخبر اس سے
میرے آنگن میں نہیں گنجیش غَم کی کچھ تو خیال کرو

تھا وقت کہ انتظار رہا کرتا تھا یہ اس سوہانے موسم کا
اب ٹوٹ سا جاتا ہوں یہ توڑ دیتا ہے کچھ تو خیال کرو

ورق ورق رُولاتا ہے مجھے میرے لکھے افسانے کا نفیس
لوٹ آو نہ کسی شب یا میرے مرنے کی تم دعا کرو۔۔

Rate it: Views: 27 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 17 Feb, 2017
About the Author: Majassaf Imran

Visit 149 Other Poetries by Majassaf Imran »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.