قدموں میں بھی تکان تھی گھر بھی قریب تھا
Poet: Parveen Shakir
By: sahar, khi

قدموں میں بھی تکان تھی گھر بھی قریب تھا
پر کیا کریں کہ اب کے سفر ہی عجیب تھا

نکلے اگر تو چاند دریچے میں رک بھی جائے
اس شہر بے چراغ میں کس کا نصیب تھا

آندھی نے ان رتوں کو بھی بے کار کر دیا
جن کا کبھی ہما سا پرندہ نصیب تھا

کچھ اپنے آپ سے ہی اسے کشمکش نہ تھی
مجھ میں بھی کوئی شخص اسی کا رقیب تھا

پوچھا کسی نے مول تو حیران رہ گیا
اپنی نگاہ میں کوئی کتنا غریب تھا

مقتل سے آنے والی ہوا کو بھی کب ملا
ایسا کوئی دریچہ کہ جو بے صلیب تھا

Rate it: Views: 705 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 03 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Good
By: Zubair, Bahawalnagar madrissa on Jul, 12 2017
Reply Reply to this Comment
Parveen shakir is the good poet and I copied her many poetries to uploaded it on my blog page and many people like y this idea and they like to share it with your friends
By: Raheel, Karachi on Jan, 12 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.