اتنا کالا دھن ہے کے سنبھال نہیں سکتا
Poet: M.ASGHAR MIRPURI
By: M.ASGHAR MIRPURI, BIRMINGHAM

اتنا کالا دھن ہے کہ سنبھال نہیں سکتا
اسے بینک میں بھی ڈال نہیں سکتا

ہر ماہ جھوٹے بہانوں کا سہارہ لے کر
زیادہ دیر ٹیکس والوں کو ٹال نہیں سکتا

پہلے ہی کتنےغیر قانونی کاموں میں ملوث ہے
اب مزید کوئی اور شوق پال نہیں سکتا

اس کے سر پہ دولت کا بھوت طاری ہے
اتنا دھن ہے کہ اسے سنبھال نہیں سکتا

لکشمی آئی تو نیند ہوئی پرائی
یہ مصیبت کسی اور کے سر ڈال نہیں سکتا

 

Rate it: Views: 3 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Nov, 2017
About the Author: M.ASGHAR MIRPURI

Visit 6759 Other Poetries by M.ASGHAR MIRPURI »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.