یہ تم فیصلہ کر لو
Poet: SAGAR HAIDER ABBASI
By: Sagar Haider Abbasi, Karachi

غموں کو دل میں بسانا ہے یا کاندھوں پہ اُٹھانا ہے
پست حوصلوں کو کرنا ہے یا اپنا ظرف بڑھانا ہے
پھولوں کے ساتھ کانٹے بھی دامن میں آ جاتے ہیں
پھولوں کو تلاشنا ہے یا گلے کانٹوں کو لگانا ہے
یہ تم فیصلہ کر لو تمھیں کیاٹھیک لگتا ہے
یاد قصہِ دل کو رکھنا ہے یا پھر بھول جانا ہے
آسان نہیں زندگی کا سفر مگر کاٹنا تو ہے تجکو
چاہے مسکرانا ہے یا آنسو بہانا ہے
یہ تم فیصلہ کر لو یہ تمہاری ذات کا دکھ ہے
اسے یہیں دفنانا ہے یا اسکا ماتم منان ہے
کہاں اس بے جان تعلق کو الوداع کہنا ہے
کہاں تک ساتھ دینا ہے کہاں پر چھوڑ جاناہے
یہ تم فیصلہ کر لو مراسم بھی پرانا ہے
انا کی لاج رکھنی ہے یا سر کو جھکانہ ہے
کب تک اذیت میں رہنا ہے خود سے لڑناہے
کہان پہ جیت ضروری ہے کہاں پہ ہار جاناہے
یہ تم فیصلہ کر لو یہ تمہارے دکھ ہیں
دکھوں کا یہ بوجھ اب تم کو تنہا ہی اُٹھاناہے
قدم گھسیٹ کے چلنا ہے زخموں کو چھپاناہے
ہمیشہ مسکرانا ہے
یہ تم فیصلہ کر لو تمہیں منزل تک پہنچناہے
یا رستے میں ڈوب جاناہے
یہ تمہاری انا کا مسئلہ ہے تمہاری ذات کا دکھ ہے
اپنی ذات و انا کے مسئلوں کو تمہیں خود ہی سلجھاناہے
یہ تم فیصلہ کر لو
یہ تم فیصلہ کر لو

Rate it: Views: 20 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 16 Apr, 2017
About the Author: sagar haider abbasi

Sagar haider Abbasi
From Karachi Pakistan
.. View More

Visit 211 Other Poetries by sagar haider abbasi »
 Reviews & Comments
sir kar liya faisla
wa wa wa wa wa wa wa wa kia kehna
By: shamrooz younus, karachi on Apr, 19 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.