اپنی تدبیر نہ تقدیر پہ رونا آیا
Poet: Naushad Ali
By: afzal, khi

اپنی تدبیر نہ تقدیر پہ رونا آیا
دیکھ کر چپ تری تصویر پہ رونا آیا

کیا حسیں خواب محبت نے دکھائے تھے ہمیں
جب کھلی آنکھ تو تعبیر پہ رونا آیا

اشک بھر آئے جو دنیا نے ستم دل پہ کئے
اپنی لٹتی ہوئی جاگیر پہ رونا آیا

خون دل سے جو لکھا تھا وہ مٹا اشکوں سے
اپنے ہی نامے کی تحریر پہ رونا آیا

جب تلک قید تھے تقدیر پہ ہم روتے تھے
آج ٹوٹی ہوئی زنجیر پہ رونا آیا

راہ ہستی پہ چلا موت کی منزل پہ ملا
ہم کو اس راہ کے رہ گیر پہ رونا آیا

جو نشانے پہ لگا اور نہ پلٹ کر آیا
ہم کو نوشادؔ اسی تیر پہ رونا آیا

Rate it: Views: 5 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 11 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.