کورونا وائرس سے صحتیاب ہونے والی خاتون کی کہانی جانیں اس خبر میں

کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والی امریکی خاتون نے اپنی بیماری کے حوالے سے بیان کرتے ہوئے کہا کہ میں لوگوں کو اُمید دلانا چاہتی ہوں کہ گھبرائیں نہیں اگر آپ صبر و تحمل سے کام لیں گے تو آپ بھی میری طرح بالکل صحتیاب ہو سکتے ہیں۔

عالمی میڈیا کی ایک رپورٹ کے مطابق امریکہ کے شہر واشنگٹن سے تعلق رکھنے والی 37 سالہ الزبتھ شنائیڈر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اُنہوں نے بائیو انجینئرنگ میں پی ایچ ڈی کی تعلیم حاصل کی ہوئی ہے اور وہ اپنی کہانی لوگوں کو اِس لئے سُنانا چاہتی ہیں تاکہ کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے مریضوں کی زندہ بچنے کی اُمید کو بڑھا سکیں۔

خاتون نے بتایا کہ 25 فروری کو وہ ایک پارٹی میں گئی تھیں جس کے تین روز بعد اُن کو نزلہ، کھانسی جیسی علامات ظاہر ہونا شروع ہوئیں ساتھ ہی بہت زیادہ تھکن بھی محسوس ہونے لگی۔

شنائیڈر کو یہ لگا کہ شاید مصروفیات کے باعث اُن کو تھکن محسوس ہو رہی ہے۔

خاتون نے بتایا کہ وہ اپنے دفتر میں موجود تھیں اور وہاں اُن کو بخار ہو گیا جس کے بعد وہ ‌فوراً تمام کام چھوڑ کر اپنے گھر آگئیں۔

خاتون نے بتایا کہ تیز بخار ہونے کی وجہ سے وہ سردی سے کانپ رہی تھیں اُنہوں نے بتایا کہ وہ نزلہ کھانسی کی دوائیاں کھا رہی تھیں کیونکہ انہیں گمان بھی نہیں تھا کہ وہ کورونا وائرس کا شکار ہوگئیں۔

واشنگٹن میں مقیم خاتون نے بتایا کہ جب اُن کی طبیعت زیادہ خراب ہوئی تو وہ فوراً ڈاکٹر کے پاس گئیں جس پر ڈاکٹر نے انہیں گھر میں آرام کرنے کا مشورہ دیا۔

خاتون نے مزید بتایا کہ کچھ دن بعد اُنہوں نے اپنی دوست کی فیس بک پر پوسٹ دیکھی جس کے بعد انہیں معلوم ہوا کہ پارٹی میں شریک مزید 5 لوگوں کی حالت بھی اُنہیں کی طرح خراب ہو گئی اور اُن کو بھی وہ ہی علامات ظاہر ہو رہی ہیں جو علامات شنائیڈر کو ظاہر ہوئی تھیں۔

شنائیڈر نے بتایا کہ اُن میں سے چند لوگ ڈاکٹر کے پاس گئے تو ڈاکٹر نے اُن کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ نہیں کروایا بلکہ نزلہ بخار کی دوائیاں دیں۔

انہوں نے بتایا کہ جب وہ کورونا وائرس کے حوالے سے اپنا چیک اپ کروانے ڈاکٹر کے پاس گئیں تو سات دن بعد ان کو بری خبر ملی کہ وہ بھی کورونا وائرس کا شکار ہوگئیں۔

خاتون نے بتایا کہ اُس کے بعد اُنہوں نے اپنا علاج کروانا شروع کیا اور ایک ہفتے بعد اُن کو اِس وائرس سے چھٹکارا حاصل ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ کورونا وائرس کا علاج کروانے کے بعد زیادہ گھر سے باہر نہیں جاتیں نہ ہی لوگوں سے ملاقات کرتیں۔

الزبتھ شنائیڈر نے کہا کہ کسی کو بھی اس طرح کی علامات ظاہر ہوں تو فوری طور پر اپنا ٹیسٹ کروائیں، پانی کا استعمال زیادہ کریں، کوشش کریں کہ زیادہ گھر سے باہر نہ نکلیں اور آرام کرنے کو زیادہ ترجیح دیں۔

YOU MAY ALSO LIKE :