دیکھنی ہے تہذیب تو غریب کا گھر دیکھ
Poet: عامر جہانگیر
By: AMAR JAHANGIR, Rawlakot

دیکھنی ہے تہذیب تو غریب کا گھر دیکھ
ابھرتے ہوئے سورج کو فلک پہ ذرا دیکھ

پھٹا ہو ا دوپٹہ ، اور کچھ نہیں پاس
پھر بھی سر ان کا ڈھانپا ہو ا دیکھ

مایوسی میں چھپی غربت کے سائے میں
گزرتی ہے زندگی کیسے یہ ذر ا دیکھ

تجھے کہاں قدر اپنی تہذیب کی عامر
غریب کی جھونپڑی میں ذرا آ کر دیکھ

Rate it: Views: 3 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 21 May, 2018
About the Author: AMAR JAHANGIR


Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.