سیال شوق میں ہے باغیانہ تنہائی
Poet: سدرہ سبحان
By: Sidra Subhan, Kohat

سیال شوق میں ہے باغیانہ تنہائی
زوال رت میں ہر اک تازیانہ تنہائی

ندائے طورکی ہر بازگشت سنتی ہے
حرا کی گود میں ہے صوفیانہ تنہائی

قبائے حرف و سخن ساتھ لیے پھرتی ہے
ردائے درد اوڑھے شاعرانہ تنہائی

نقوش سطوت ماضی تراش لائی ہے
جلال عشق میں ہے حاکمانہ تنہائی

اداس موسموں کیساتھ رقص کرتے ہوئے
خمار وصل میں ہے والہانہ تنہائی

ہجوم گردش یاراں کو بھی خبر نہ ہوئی
فصیل جاں میں رہی جارحانہ تنہائی

نگار خانہ دل میں دھمال ہے اسکی
جو دیکھتا ہے میری غائبانہ تنہائی
 

Rate it: Views: 0 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Mar, 2018
About the Author: Sidra Subhan

*Hafiz-E-Quraan

*Columnist at Daily Mashriq (نگار زیست)

*PhD scholar in Chemistry
School of Chemistry and Chemical Engineering,
Key Laborator
.. View More

Visit 38 Other Poetries by Sidra Subhan »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.