عجیب مَنظَر ہے دِل کی چوکھٹ پہ منزلیں نارسأ ملی ہیں
Poet: سدرہ سبحان
By: Sidra Subhan, Kohat

عجیب مَنظَر ہے دِل کی چوکھٹ پہ منزلیں نارسأ ملی ہیں
یقیں کے منبر پہ, تیری آنکھیں, مگر بدست ِ دعا ملی ہیں

وہ ایک لَمحہ کہ جِس مِیں مَیں نے مُراد مانگی تھی زندگی کی
تمہاری سانسوں کی ساری کَڑیاں اُس ایک لمحے سے آ ملی ہیں

میں مُنتَظِر ہوں کہ میری آنکھوں پہ تیرے چَہرے کا نُور اترے
تیرے تَخَیُّلٗ میں ڈُوبی کِرنیں دیار ِ مشرِق سے جا ملی ہیں

میں سَبز موسم پہن کے نکلی تھی زِندگی سے نِباہٗ کرنے
تیری وفاٸیں ، گُلال بن کر ، مجھے بَرَنگ ِ جزا ملی ہیں

کوٸی تو شَبنم کا ہار لے کر ، وفا کے صِحرا میں چَل پڑا ہے
بھٹَکتِی پیاسی ہَوا کے آنچل میں خُوشبُوٸیں بے پناہ ملی ہیں

میں مُطمٸن ہوں کہ خَواہشوں نے تمہاری دَھڑکن سنبھال لی ہے
تمہارے لہجے کی شَوخِیوں سے میری اُمنگیں بَجَا ملی ہیں

کوٸی تو لَوح و قَلم سے آگے میرے جَواز ِ سخن کو سمجھے
نگار ِ ہستی کی ساری خوشیاں کسی غزل کی گدا ملی ہیں

ہماری بستی میں شام اُتری تو یاد آیا ہے مجھ کو سِدرہ
نجوم ِشب کو, شمار کرتیں، تمام نیندیں، سزا ملی ہیں!
 

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Mar, 2018
About the Author: Sidra Subhan

*Hafiz-E-Quraan

*Columnist at Daily Mashriq (نگار زیست)

*PhD scholar in Chemistry
School of Chemistry and Chemical Engineering,
Key Laborator
.. View More

Visit 38 Other Poetries by Sidra Subhan »
 Reviews & Comments
Nice
By: Muhammad waqas, Rwp on Apr, 24 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.