یہ زندگی کی ہے صورت تو زندگی کر لی
Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

مجھے خبر نہیں غم کیا ہے اور خوشی کر لی
یہ زندگی کی ہے صورت تو زندگی کر لی

فغاں تو عشق کی اک مشق ابتدائی ہے
ابھی تو اور بڑھے گی یہ لے ابھی کر لی

تمام عمر اسی رنج میں تمام ہوئی
کبھی یہ تم نے نہ پوچھا تری خوشی کر لی

تم اپنے ہو تو نہیں غم کسی مخالف کا
زمانہ کیا ہے فلک کیا ہے مدعی کر لی

دلوں کو کھینچ رہی ہے کسی کی مست نگاہ
یہ دل کشی ہے تو پھر عذر مے کشی کر لی

مذاق عشق کو سمجھو گے یوں نہ تم ناصح
لگا کے دل کہیں دیکھو یہ دل لگی کر لی

وہ رات دن نہیں ملتے تو ضد نہ کروشمہ
کبھی کبھی کی ملاقات بھی بری کر لی

Rate it: Views: 5 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 01 Mar, 2018
About the Author: washma khan washma

I am honest loyal.. View More

Visit 4332 Other Poetries by washma khan washma »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.