اُداس نہ ہوا کرو
Poet:
By: Hukhan, karachi

سنو! پھر سے کہہ رہا ہوں
اداس نہ ہوا کرو
اداسی میں تم اور بھی سندر لگتے ہو
آنکھوں کے خواب عنوان سا بن جاتے ہیں
ہر عنوان میں اک سوال سا بن جاتے ہیں
کہہ دیتی ہے سب کچھ تمہاری اداسی
زندگی کے کسی موڑ پر اداسی چھوڑ آؤ
خزاں میں بھی بہار کی طرح مسکراؤ
آندھیوں میں بھی مسکان کا دیا جلاؤ
جانتا ہوں اداسیوں میں بھی کمال لگتے ہو
چمن میں کھلے کسی سرخ گلاب کی طرح

Rate it: Views: 9 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Nov, 2017
About the Author: Hukhan

Visit 295 Other Poetries by Hukhan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
romantic bht hee romantic
By: rahi, karachi on Nov, 08 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.