جو تم ملے
Poet: شاکرہ نندنی
By: Shakira Nandini, Oporto

کبھی تو وقت ٹھیرا ہوگا ، جو تم ملے
یا محبت کی اوس گری ہوگی، جو تم ملے
یا جھومتی فضائوں نے چھوا ہوگا، جو تم ملے
وقت کی اس اُلجھی پہیلی میں بات ہوگی، جو تم ملے
دھیمی سی دل کی دھڑکن میں کچھ تو تھا، جو تم ملے
تیری پلکوں کے اشارے کچھ تو کہہ رہے ہیں، جو تم ملے
کچھ تو جوڑ رہا تھا تیرا دل میرے دل کو، جو تم ملے
اب تم ہی بتائو نندنی ان اشاروں کی پہیلیاں
یہ سازش ہے یا اتفاق ہمارے ساتھ، جو تم ملے
 

Rate it: Views: 22 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 24 Oct, 2017
About the Author: Shakira Nandini

I am settled in Portugal. My father was belong to Lahore, He was Migrated Muslim, formerly from Bangalore, India and my beloved (late) mother was con.. View More

Visit 172 Other Poetries by Shakira Nandini »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.