کیا جانو !
Poet: عمیر اکبر
By: umair Akbar tabish , Rawalpindi

 کیا جانو میں ان لمحوں میں کن حالات سے گزرا
تیرا رنگ جب تیرے لہجے کے انداز سے گزرا

بدلنا تھا تو کسی اور موسم میں بدل جاتے
خزاں کا تھا جونکھا اک جو بہار سے گزرا

یقین تیری محبت پر مجھے خود سے بھی زیادہ تھا
تیری بے رخی سے میں کس امتحان سے گزرا

گزرتے تھے سر راہ ہم اکثر جن راہوں سے
پوچھو تو ادھوری اس کبھی میں راہ سے گزرا ؟

گزرا کیا میرے دل پر تمہیں اس سے ہے کیا لینا
کبھی تو میں تھا تیرے دل کی راہ سے گزرا

سنا ہے کیا بارش میں کچے مکانوں کا ؟
اپنا بھی جدائی میں کچھ ایسا حال ہے گزرا

اسے میں بے وفا کہدوں یہ توہین محبت ہے
تیری وفا کے تابش مگر آس پاس سے گزرا

Rate it: Views: 12 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Oct, 2017
About the Author: umair Akbar tabish

like poetry

write poetry

read poetries

listing Music
.. View More

Visit 66 Other Poetries by umair Akbar tabish »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.