نیند میں جلے ہوئے کچھ خواب لکھ رہا ہوں
Poet: SAGAR HAIDER ABBASI
By: sagar haider abbasi, Karachi

نیند میں جلے ہوئے کچھ خواب لکھ رہا ہوں
گزرے ہیں جو مجھ پر وہ عذاب لکھ رہا ہوں

سہہ کر زمانے کی سبھی کڑی دشواریاں
حاصلِ زندگی پہ ایک کتاب لکھ رہا ہوں

تیرے غمِ ہجر کو لگا رکھا ہے سینے سے
ہجر میں ڈوبے تارے کو مہتاب لکھ رہا ہوں

اب تک رینگتی ہے تیری خوشبو سانسوں میں
تیرے حسین بدن کو میں گلاب لکھ رہا ہوں

بیٹھ کر عالمِ تنہائی میں میں ساگر
خود ہی سوال خود ہی جواب لکھ رہا ہوں
 

Rate it: Views: 60 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 26 Aug, 2017
About the Author: sagar haider abbasi

Sagar haider Abbasi
.. View More

Visit 210 Other Poetries by sagar haider abbasi »
 Reviews & Comments
good sagar nice
By: saima naz, karachi on Aug, 29 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.