وہ نہ رکھے امیدِ رحمانی
Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, Kuala Lampur

وہ نہ رکھے امیدِ رحمانی
جس کے اندر ہے سوچ شیطانی

خون سستا ہے مہنگا ہے پانی
پھر بھی دیں گے ضرور قربانی

نام لکھ دو جہادِ اکبر میں
زیست ہو جائے گی یہ لافانی

اک سمندر ہے آنکھ میں لیکن
کتنی ہلچل ہے کتنی طغیانی

پہلے دُکھتا تھا پاس میں رہنا
اب جدائی میں کیسی حیرانی

زندگی کے قریب رہ کر بھی
کیسا شکوہ ہے ، کیسی من مانی

بات کرنی ہے گر محبت کی
چھوڑو وشمہ یہ ساری نادانی

Rate it: Views: 39 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 19 Jul, 2017
About the Author: washma khan washma

I am honest loyal.. View More

Visit 4072 Other Poetries by washma khan washma »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.