میں چاہتوں کی غزل تراشوں کہ نفرتوں کا حساب لکھوں،
Poet: Sidra Subhan
By: sidra subhan, Kohat

میں چاہتوں کی غزل تراشوں کہ نفرتوں کا حساب لکھوں،
تمہی بتاؤ میں کس طرح سے یہ زندگی کی کتاب لکھوں.

رفاقتیں تو جواں ہیں لیکن، وفا کے بالوں میں چاندنی ہے،
کہاں گلابوں کے پھول رکھوں،کہاں پہ قسمت خراب لکھوں.

سنا ہے ہر سو برف پڑی ہے، ہوا میں لیکن درشتگی ہے،
میں خنک موسم کا ذکر چھیڑوں یا سرد لہجوں کہ باب لکھوں

تمہارے جانے سے زندگی کی تمام خوشیاں بلک رہی ہیں،
میں کیسے بوجہ مسکراوں اورکس حقیققت کو خواب لکھوں

معاملہ انتساب کا تھا وہ حل ہوا ہے تو سوچتی ہوں،
ترے سوالوں پہ سر جھکا کر کوئی مناسب جواب لکھوں

Rate it: Views: 7 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Jul, 2017
About the Author: sidra subhan

Visit 26 Other Poetries by sidra subhan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
fabulous heart touching..... stay blessed
By: Faiza Umair, Lahore on Aug, 22 2017
Reply Reply to this Comment
Bahoot Khoob. Stay blessed.
By: Hassan Kayani, Leeds (UK) on Aug, 21 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.