اس کے دشمن ہیں بہت آدمی اچھا ہوگا
Poet: Nida Fazli
By: Aisha, khi

اس کے دشمن ہیں بہت آدمی اچھا ہوگا
وہ بھی میری ہی طرح شہر میں تنہا ہوگا

اتنا سچ بول کہ ہونٹوں کا تبسم نہ بجھے
روشنی ختم نہ کر آگے اندھیرا ہوگا

پیاس جس نہر سے ٹکرائی وہ بنجر نکلی
جس کو پیچھے کہیں چھوڑ آئے وہ دریا ہوگا

مرے بارے میں کوئی رائے تو ہوگی اس کی
اس نے مجھ کو بھی کبھی توڑ کے دیکھا ہوگا

ایک محفل میں کئی محفلیں ہوتی ہیں شریک
جس کو بھی پاس سے دیکھو گے اکیلا ہوگا
 

Rate it: Views: 22 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 14 Jul, 2017
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
The line 'Pyas Jis Nehar Se Takrai' is my most favorite line which I really like. Actually, I love the sad mood of Nida Fazli, he have an ability to write poetry in unique sad style.
By: ijaz, khi on Jul, 14 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.