اے میرے عہد شِکن ساتھی
Poet: محمد اطہر طاہر
By: Athar Tahir, Haroonabad

اے میرے عہد شِکن ساتھی،،
اے میرے بچھڑے ہوئے دلبر!
مجھے معلوم تھا تب سے،،،
جب ہم ساتھ چلتے تھے،،
کہ چمکتی چیز دیکھو گے،
تو تم بدل ہی جاؤگے،،
ذرا سی مشکل دیکھو گے
تو تم ڈر ہی جاؤ گے،،
پل میں تولہ پل میں ماشہ
تب بھی تو تھا یہی تماشہ،،
سو اب تیرا بدل جانا،
یہ نئی بات نہیں ہے،،
وفا نبھائے جو عورت
وہ عورت ذات نہیں ہے،،

Rate it: Views: 40 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 22 May, 2017
About the Author: Athar Tahir

Visit 87 Other Poetries by Athar Tahir »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
میرے معترض مہربان دوستو، السلام عليكم، میں آپ سے بالکل متفق ہوں، اور میں صنفِ نازک کی بیحد عزت و احترام کرنے والا انسان ہوں،،
اس تحریر کا مقصد کسی کی دل آزاری مقصود نہ تھی،، دراصل میری ایک قابلِ صد احترام ساتھی نے مرد کی شان کچھ زہر اگل دیا تھا،،
میں نے اس تحریر کے جواب میں یہ لکھا ہے،،
پھر بھی جس کی دل آزاری ہوئی میں اس سے معذرت چاہتا ہوں اور آخری دو لائینز کو حذف بھی کروں گا،،
آپکا مخلص محمد اطہر طاہر
By: Athar Tahir, Haroonabad on Jun, 25 2017
Reply Reply to this Comment
All poetry good but last lines r not
All women r not same
Respect women
Stay blessed brother
By: Rizwana, Oshawa on on Jun, 23 2017
Reply Reply to this Comment
Last wali 2 line change kr dejiy plz,
By: Shahzadi, Haroonabad on Jun, 20 2017
Reply Reply to this Comment
Hr word kmal ka effect rkhta h,
Bt last line pe agree nh,
Q ki wafa ort hi nibhati h,
By: Shahzadi, Haroonabad on Jun, 20 2017
Reply Reply to this Comment
kia bat hai sahib, buhat kamal likhte hain aap. salaamt raain
By: Sahil Shamsi, Multan on May, 24 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.