کوئی آفت یہ ناگہانی ہے
Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

کوئی آفت یہ ناگہانی ہے
زیست زخموں کی اک کہانی ہے

سر پہ سورج کی آگ ہے لیکن
یاد جاناں بہت پرانی ہے

میں بھی اس آشنا سے ڈرتی ہوں
لہجہ اس کا بھی پانی پانی ہے

میری منزل تمہارے قدموں میں
میری الفت یہ جاودانی ہے

اک انا ہی جو پاس ہے میرے
وہ بھی دشمن کی مہربانی ہے

میرے ہونٹوں پہ جو تبسم ہے
تیری چاہت کی اک نشانی ہے

وشمہ عزت کا پاس ہے جگ میں
ورنہ دولت تو آنی جانی ہے

Rate it: Views: 12 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 May, 2017
About the Author: washma khan washma

I am honest loyal.. View More

Visit 3968 Other Poetries by washma khan washma »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.