حوصلے اور ضبط کا امتحان ہے
Poet: Shaikh Khalid Zahid
By: Shaikh Khalid Zahid, Karachi

حوصلے اور ضبط کا امتحان ہے
عبادت سے محبت کا امکان ہے

بہت شور کرتا ہے سینے میں کوئی
پنجر ہے میرا یا کوئی زندان ہے

سر میں خاک ڈالے برہنہ پا لئے
جیسے چند لمحوں کا مہمان ہے

ڈھونڈو تو کہیں ملتا ہی نہیں
کہنے کو تو ہر کوئی انسان ہے

وہ بھی اپنی دکھی داستاں چھوڑ گیا
وجود میرا درد و الم کا مکان ہے

لغزشیں قدموں سے لپٹی ہوئی ہیں
نامعلوم راستوں کا راہی نگہبان ہے

Rate it: Views: 20 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 17 May, 2017
About the Author: Sh. Khalid Zahid

Take good care of others who live near you specially... View More

Visit 31 Other Poetries by Sh. Khalid Zahid »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.