خدُا راہ اپنی موهائی سیاه کو بکھرنے نہ دو
Poet: Majassaf Imran
By: Majassaf Imran, Gujrat

خدُا راہ اپنی موهائی سیاه کو بکھرنے نہ دو
چاند سے چہرے سے ستاروں کو بکھرنے نہ دو

سمبھال رکھو میرے لئے ہر بکھری ہوئی زُلف
چشم بَد ہیں شہر کے لوگ انہیں انچل سے نکلنے نہ دو

سیاہ زُلفیں ہیں تیری کسی جامنزوی میں به عنوان ماه
ذرا سمبھالو انہیں کسی سیاہ قلب کی نظر لگنے نہ دو

ہے آج مخفلِ قلب ویران اک دلخواه کی مُنتظر
لب لبوں پہ رکھو زُلفیں چہرے پہ رہنے نہ دو

گرتی زُلفوں پہ تیری آتے ہیں پنچھی دیدارِ سخن
یہ شرف ہمیں کرو عطا یہ ستم میرے حق میں رہنے دو

وقت بدلہ بخت و اقبال تغییر خواہش رہی جوں کی توں
کھا کے ترس نہ بخشو مُحبت نفیس ہم پہ زوال ہی رہنے دو

Rate it: Views: 5 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 16 May, 2017
About the Author: Majassaf Imran

Visit 161 Other Poetries by Majassaf Imran »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.