مائے نی! میں کِتھوں لبھاں درد وچھوڑے دا حَل نی . . .
Poet: Rana Tabassum Pasha(Daur)
By: Rana Tabassum Pasha(Daur), Dallas, USA

تُو جا بسی ہے زمیں کے اندر
تیری خوشبو آتی ہے آسماں سے

نہ تُو دور ہے . . . . . نہ تُو پاس ہے
تجھے اے ماں! لاؤں کہاں سے

تجھے ڈھونڈا جُگنوؤں کے قافلے میں
پتہ پوچھا تیرا تاروں کے کارواں سے

تجھے جلدی بہت تھی لوٹ جانے کی
تُو پہلے چلی گئی خود اپنی ماں سے

تُو بچھڑ گئی میری دنیا ہی اجڑ گئی
کیوں روٹھ گئی تُو اپنی جان ِ جاں سے

درد جدائی سہنا پڑا پردیس میں رعنا
تقدیرمیں تھا لکھا گزرنا اس امتحاں سے

Rate it: Views: 25 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 14 May, 2017
About the Author: Rana Tabassum Pasha(Daur)

Visit 37 Other Poetries by Rana Tabassum Pasha(Daur) »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
ماں! تو بچھڑ گئی تو دنیا ہی اجڑ گئی
بات ہی بگڑ گئی تیری مرگ ناگہاں سے
By: Rana Tabassum Pasha(Daur), Dallas, USA on May, 16 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.