دل ٹھہرا ہوا ہے
Poet: Sagar Haider Abbasi
By: Sagar Haider Abbasi, Karachi

یہ دل ٹھہرا ہوا ہے موجِ صبا میں
ازل سے درد شامل تو ہے وفا میں

کرے گر کوئی تو کیسے دل کا مرہم
اثر ہی جب کوئی نا ہو جو دوا میں

کسی سے کیا کرے وہ امید بتا
کوئی راضی ہی نا ہو جس کی رضا میں

تو ہی بتا وہ تجھ کو پائے گا کس طرح
جسے تو نا ہو ملا لاکھوں دعا میں

وہ عہدِ ہجر کر کے آیا تھا ساگر
اسے رکنا ہی نا تھا کیا دیتا صدا میں

Rate it: Views: 44 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 27 Apr, 2017
About the Author: sagar haider abbasi

Sagar haider Abbasi
.. View More

Visit 197 Other Poetries by sagar haider abbasi »
 Reviews & Comments
WHAT A GREATTTTTTTTTT SIRRRR
By: Kiran Sheikh, karachi on Apr, 29 2017
Reply Reply to this Comment
what a great usy rukna he na tha kia deita sadda main wawo
By: Kiran Sheikh, karachi on Apr, 28 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.