گواہی کیسے ٹوٹتی معاملہ خدا کا تھا
Poet: Parveen Shakir
By: Talat, khi

گواہی کیسے ٹوٹتی معاملہ خدا کا تھا
مرا اور اس کا رابطہ تو ہاتھ اور دعا کا تھا

گلاب قیمت شگفت شام تک چکا سکے
ادا وہ دھوپ کو ہوا جو قرض بھی صبا کا تھا

بکھر گیا ہے پھول تو ہمیں سے پوچھ گچھ ہوئی
حساب باغباں سے ہے کیا دھرا ہوا کا تھا

لہو چشیدہ ہاتھ اس نے چوم کر دکھا دیا
جزا وہاں ملی جہاں کہ مرحلہ سزا کا تھا

جو بارشوں سے قبل اپنا رزق گھر میں بھر چکا
وہ شہر مور سے نہ تھا پہ دوربیں بلا کا تھا

 

Rate it: Views: 494 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 16 Feb, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
ye to tere qismat achi thi jo tum se pyar howa farooq warna hum bhi shahzad e the hussan k
By: Farooq shahzad shalwani, Rajan pur on Mar, 22 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.