سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم
Poet: SAGAR HAIDER ABBASI
By: sagar haider abbasi, Karachi

سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم
سبھی قسمیں سبھی رسمیں محبت کی نبھانا تم
تمہارے بن یہ زندگی مجھے بے نور لگتی ہے
تمہارے بن ہر ایک خوشی خود سے دور لگتی ہے
تمہارے بن میری سانسیں جاناں سینے میں گھٹتی ہیں
تمہارے بن دھڑکینیں میری قدم قدم پہ رکتی ہیں

دیا ہے ساتھ میرا تو تعلق بھی نبھانا تم
سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم

میری آنکھوں نے رتجگوں کے کئی عذاب دیکھے ہیں
تم ملے ہو تو آنکھوں نے پھر کچھ خواب دیکھے ہیں
ملا کر نظر ہم سے پھر نگاہیں نہ چرانا تم
سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم
مجھے چھوڑ کر تم رسمِ زمانہ بھی تو نبھاو گے
بھلا کیا خطا ہے اس میں اگر تم مجھ کو چاہوگے

تمہیں ترسیں میری آنکھیں نہ مجھ کو یوں ستانہ تم
سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم

تمہیں دیکھا ہے تو مجھے زندگی سے پیار ہوا ہے
دل پھر سے محبت کا طلبگار ہوا ہے
اتنی سے التجا ہے کہ مجھ کو نہ بھلانا تم
سنوجاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم

دہرانا نہ فریبِ وفا کو پھر سے جاناں
پونچھے ہیں اگر آنسو تو مجھ کو نہ رلانا تم
سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم

دیا ہے ساتھ اگرمیرا تو تعلق بھی نبھانا تم
سنو جاناں مجھے چھوڑ کر نہ جانا تم

Rate it: Views: 24 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 28 Nov, 2016
About the Author: sagar haider abbasi

Sagar haider Abbasi
From Karachi Pakistan
.. View More

Visit 210 Other Poetries by sagar haider abbasi »
 Reviews & Comments
nice poetry so good sir g
By: shamrooz, karachi on Oct, 09 2017
Reply Reply to this Comment
Best
u r very best poeter
By: Irfan khan baloch, Jhang on Nov, 30 2016
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.