اس پر تمہارے پیار کا الزام بھی تو ہے
Poet: Qateel Shifai
By: nasir, khi

اس پر تمہارے پیار کا الزام بھی تو ہے
اچھا سہی قتیلؔ پہ بدنام بھی تو ہے

آنکھیں ہر اک حسین کی بے فیض تو نہیں
کچھ ساگروں میں بادۂ گلفام بھی تو ہے

پلکوں پہ اب نہیں ہے وہ پہلا سا بار غم
رونے کے بعد کچھ ہمیں آرام بھی تو ہے

آخر بری ہے کیا دل ناکام کی خلش
ساتھ اس کے ایک لذت بے نام بھی تو ہے

کر تو لیا ہے قصد عبادت کی رات کا
رستے میں جھومتی ہوئی اک شام بھی تو ہے

ہم جانتے ہیں جس کو کسی اور نام سے
اک نام اس کا گردش ایام بھی تو ہے

اے تشنہ کام شوق اسے آزما کے دیکھ
وہ آنکھ صرف آنکھ نہیں جام بھی تو ہے

منکر نہیں کوئی بھی وفا کا مگر قتیلؔ
دنیا کے سامنے مرا انجام بھی تو ہے

 

Rate it: Views: 37 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 19 Mar, 2018
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.