اداسی
Poet: Naveed Anwar - Roomi
By: Naveed Anwar, Point Hope

خاموشی سے نظريں نيچی کرے بيٹھے ہو
کيا غم ہے تمہيں جو اتنے اداس لگتے ہو

پیشانی پر مایوسی کا تاثر واضح کرکے رکھے ہو
پريشان اتنے ہو کے سرے عام نمائش لگا رکھے ہو

لگتا ہے کے يہ پہلا غم ہے جو چھپانيں سے کاثر ہو
دل کا يہ رنج نیا ہے اور اس سے ابھی بہت متاثر ہو

کچھ وقت گزرے گا اور کچھ عادت سی ہو جاے گی
اس مرض کا کوی علاج نہيں بس اک لت پر جاے گی

اپنی چوٹوں کی شفا یابی تلاش نہ کر پاؤ گے
اپنے زخموں پر خودی نمک چھڑکتے جاؤ گے

خوشی اور مصرت کی طلب اور مطلب کھو جائے گا
رومی زندگی کو اداسی سے متوازن کرنا ضروری ہو جائے گا

Rate it: Views: 16 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 13 Nov, 2017
About the Author: Naveed Anwar

Visit 11 Other Poetries by Naveed Anwar »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.