ہائے ہائے
Poet: مرزا عاصی اختر
By: Bakhtiar Nasir, Lahore

خوب اس بت نے نباہی ہم سے یاری ہائے ہائے
جیل میں اب کر رہے ہیں آہ و زاری ہائے ہائے

تیغ ابرو زن سے کیا دل میں اتاری ہائے ہائے
دل میں یہ تو کھب گئ ساری کی ساری ہائے ہائے

ہو گئے چودہ طبق روشن توجہ سے تری
یاد ہے اب تک وہ ترا دست بھاری ہائے ہائے

جس کے چکر میں ہوا کھائ ہے نارا جیل کی
کس کے گھر میں بس گئ جا کر وہ ناری ہائے ہائے

تیسری دنیا پہ کیا موقوف ہے اب تو جناب
ساری دنیا پر ہے اس کی تھانے داری ہائے ہائے

Rate it: Views: 11 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 08 Jul, 2017
About the Author: Bakhtiar Nasir

Against a foe I can myself defend, but Heaven protect me from a blundering friend! {D'Arey W.Thompson}.. View More

Visit 297 Other Poetries by Bakhtiar Nasir »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.