اس کا نقشہ ایک بے ترتیب افسانے کا تھا
Poet: Munir Niazi
By: nadir, khi

اس کا نقشہ ایک بے ترتیب افسانے کا تھا
یہ تماشا تھا یا کوئی خواب دیوانے کا تھا

سارے کرداروں میں بے رشتہ تعلق تھا کوئی
ان کی بے ہوشی میں غم سا ہوش آ جانے کا تھا

عشق کیا ہم نے کیا آوارگی کے عہد میں
اک جتن بے چینیوں سے دل کو بہلانے کا تھا

خواہشیں ہیں گھر سے باہر دور جانے کی بہت
شوق لیکن دل میں واپس لوٹ کر آنے کا تھا

لے گیا دل کو جو اس محفل کی شب میں اے منیرؔ
اس حسیں کا بزم میں انداز شرمانے کا تھا
 

Rate it: Views: 54 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Jul, 2017
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
The way when Munir Niazi used his name in the last lines of his poetry is very unique. I really like the style of using 'Takhallus' in his poetry. He is one of the famous poet of Ghazalz in the subcontinent.
By: tahir, khi on Jul, 06 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.