غم کے اندھیروں میں پلنا چھوڑ دیا ہے
Poet: UA
By: UA, Lahore

غم کے اندھیروں میں پلنا چھوڑ دیا ہے
ہم نے تیری یاد میں جلنا چھوڑ دیا ہے
دل کی زمیں میں دفن ہوئے سارے موتی
اشکوں نے گالوں پہ ڈھلنا چھوڑ دیا ہے
چلتے ہیں اس رخ پہ جدھر کی ہوا چلے
سمتِ مخالف گِرنا سنبھلنا چھوڑ دیا ہے
باندھ کے پاؤں میں زنجیر رواجوں کی
گویا انگاروں پہ چلنا چھوڑ دیا ہے
ترک وفا اپنانے کی خاطر ہم نے
اپنی انا کا سر ہی کچلنا چھوڑ دیا ہے
قسمت کا لِکھا تسلیم کِیا دِل سے
اور خالی ہاتھوں کا مَسلنا چھوڑ دِیا ہے
غم کے اندھیروں میں پلنا چھوڑ دیا ہے
ہم نے تیری یاد میں جلنا چھوڑ دیا ہے

Rate it: Views: 19 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 20 Apr, 2017
About the Author: uzma ahmad

sb sy pehly insan phr Musalman and then Pakistani
broad minded, friendly, want living just a normal simple happy and calm life.
tmam dunia mein amn
.. View More

Visit 2378 Other Poetries by uzma ahmad »
 Reviews & Comments
اشکوں نے گالوں پہ سلگنا چھوڑ دیا ہے
یہ مصرع پڑھا جائے دوسرے شعر کا دوسرا مصرعہ
شکریہ
By: uzma, Lahore on Apr, 23 2017
Reply Reply to this Comment
اشکوں نے آنکھوں سے چھلکنا چھوڑ دیا ہے
By: UA, Lahore on Apr, 21 2017
Reply Reply to this Comment
اشکوں نے گالوں پہ پھسلنا چھوڑ دیا ہے
By: uzma, Lahore on Apr, 21 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.