دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا
Poet: Pirzada Qasim
By: hammad, khi

دل اگر کچھ مانگ لینے کی اجازت مانگتا
یہ محبت زاد تجدید محبت مانگتا

وقت خود ناپائیداری کے لئے مشہور ہے
ایسے بے توفیق سے میں خاک شہرت مانگتا

میں نے صحرا سے تحیر خیز حیرت مانگ لی
خاک ہو جاتا اگر تہذیب وحشت مانگتا

دل کو خوش آئی نہیں یہ دولت آسودگی
اور کچھ مل جاتی تو یہ کچھ اور زحمت مانگتا

ہیں خداوندان دنیا ہم تہی دستوں سے ہیچ
دل کو حسرت تھی تو ہم جیسوں سے خلعت مانگتا

ہو گیا ہوتا گراں گوشوں سے گر مغلوب میں
کیوں سخن آغاز کرتا کیوں سماعت مانگتا

کیا تعجب تھا کہ اس سوداگری کے دور میں
خواب بھی تعبیر ہو جانے کی قیمت مانگتا

 

Rate it: Views: 19 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 14 Mar, 2017
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.