میں جو تنہا رہ طلب میں چلا
Poet: Rais Amrohvi
By: shabeer, khi

میں جو تنہا رہ طلب میں چلا
ایک سایہ مرے عقب میں چلا

صبح کے قافلوں سے نبھ نہ سکی
میں اکیلا سواد شب میں چلا

جب گھنے جنگلوں کی صف آئی
ایک تارا مرے عقب میں چلا

آگے آگے کوئی بگولا سا
عالم مستی و طرب میں چلا

میں کبھی حیرت طلب میں رکا
اور کبھی شدت غضب میں چلا

نہیں کھلتا کہ کون شخص ہوں میں
اور کس شخص کی طلب میں چلا

ایک انجان ذات کی جانب
الغرض میں بڑے تعب میں چلا

Rate it: Views: 74 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 19 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.