اس کا چہرہ بھی سناتا ہے کہانی اس کی
Poet: Rehana Qamar
By: Aqeel, khi

اس کا چہرہ بھی سناتا ہے کہانی اس کی
چاہتی ہوں کہ سنوں اس سے زبانی اس کی

وہ ستم گر ہے تو اب اس سے شکایت کیسی
اور ستم کرنا بھی عادت ہے پرانی اس کی

بیش قیمت ہے یہ موتی سے مری پلکوں پر
چند آنسو ہیں مرے پاس نشانی اس کی

اس جفا کار کو معلوم نہیں وہ کیا ہے
بے مروت کو ہے تصویر دکھانی اس کی

ایک وہ ہے نظر انداز کرے ہے مجھ کو
ایک میں ہوں کہ دل و جاں سے دوانی اس کی

تم کو الفت ہے قمرؔ اس سے تو اب کہہ دینا
سامنے سب کے سنا دینا کہانی اس کی

Rate it: Views: 27 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 11 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
ماشاءاللہ
By: Rizwana, Oshawa on on Jun, 22 2017
Reply Reply to this Comment
bohot khoob! appriciate..
By: maqsood, Karachi on Jan, 11 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.