اب تو یہ بھی نہیں رہا احساس
Poet: Jigar Moradabadi
By: fahad, isl

اب تو یہ بھی نہیں رہا احساس
درد ہوتا ہے یا نہیں ہوتا

عشق جب تک نہ کر چکے رسوا
آدمی کام کا نہیں ہوتا

ٹوٹ پڑتا ہے دفعتاً جو عشق
بیشتر دیر پا نہیں ہوتا

وہ بھی ہوتا ہے ایک وقت کہ جب
ماسوا ماسوا نہیں ہوتا

ہائے کیا ہو گیا طبیعت کو
غم بھی راحت فزا نہیں ہوتا

دل ہمارا ہے یا تمہارا ہے
ہم سے یہ فیصلہ نہیں ہوتا

جس پہ تیری نظر نہیں ہوتی
اس کی جانب خدا نہیں ہوتا

میں کہ بے زار عمر بھر کے لیے
دل کہ دم بھر جدا نہیں ہوتا

وہ ہمارے قریب ہوتے ہیں
جب ہمارا پتا نہیں ہوتا

دل کو کیا کیا سکون ہوتا ہے
جب کوئی آسرا نہیں ہوتا

ہو کے اک بار سامنا ان سے
پھر کبھی سامنا نہیں ہوتا

Rate it: Views: 31 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 10 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Jigar Sahb ki poetry ki kia baat hai, mujhe in kai kalam me se 'Ab tou ye bhi nahi raha ahsas' buhut pasand hai jis ki waja se me is page pe aya hun aur in ki buhut si poetries read kar raha hun.
By: Ehtisham, khi on Jan, 19 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.