بڑے غضب کا ہے یارو بڑے عذاب کا زخم
Poet: Ibn e Safi
By: Sadiq, isl

بڑے غضب کا ہے یارو بڑے عذاب کا زخم
اگر شباب ہی ٹھہرا مرے شباب کا زخم

ذرا سی بات تھی کچھ آسماں نہ پھٹ پڑتا
مگر ہرا ہے ابھی تک ترے جواب کا زخم

زمیں کی کوکھ ہی زخمی نہیں اندھیروں سے
ہے آسماں کے بھی سینے پہ آفتاب کا زخم

میں سنگسار جو ہوتا تو پھر بھی خوش رہتا
کھٹک رہا ہے مگر دل میں اک گلاب کا زخم

اسی کی چارہ گری میں گزر گئی اسرارؔ
تمام عمر کو کافی تھا اک شباب کا زخم

Rate it: Views: 19 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 10 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Mujhe Ibn e Safi ki sad Ghazalain buhut pasand hain jis me meri sub se favorite Ghazal 'Bade Ghazab Ka Hai Yaro Bade Azab Ka Zakhm'hai. In ko ye ye maharat hasil hai kai apni feelings ka izhar asaan alfaz me kartay hain.
By: wahaj, khi on Jan, 19 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.