حیراں ہوں‘ دل کو روؤں کہ‘ پیٹوں جگر کو میں
Poet: MIRZA GHALIB
By: TARIQ BALOCH, HUB CHOWKI

حیراں ہوں‘ دل کو روؤں کہ‘ پیٹوں جگر کو میں
مقدور ہو‘ تو ساتھ رکھوں نوحہ گر کو میں

چھوڑا نہ رشک نے کہ‘ تیرے گھر کا نام لوں
ہر اک سے پوچھتا ہوں کہ ’’ جاؤں کدھر کو میں

جانا پڑا رقیب کے در پر‘ ہزار بار
اے کاش! جانتا نہ تیری رہگزر کو میں!

ہے کیا‘ جو کس کے باندھیے؟ میری بلا ڈرے
کیا جانتا نہیں ہوں‘ تمھاری کمر کو میں!

لو وہ بھی کہتے ہیں کہ ’’ یہ بے ننگ و نام ہے‘‘
یہ جانتا اگر‘ تو لٹاتا نہ گھر کو میں

چلتا ہوں تھوڑی دور‘ ہر اک تیز رو کے ساتھ
پہچانتا نہیں ہوں ابھی راہبر کو میں

خواہش کو‘ احمقوں نے‘ پرستش دیا قرار
کیا پوجتا ہوں اس بتِ بیداد گر کو میں؟

پھر بیخودی میں بھول گیا‘ راہِ کوئے یار
جاتا وگرنہ ایک دن اپنی خبر کو میں

اپنے پہ کر رہا ہوں قیاس‘ اہل دہر کا
سمجھا ہوں دلپذیر‘ متاعِ ہنر کو میں

غالبؔ! خدا کرے کہ‘ سوارِ سمندِ ناز
دیکھوں علی بہادرِ عالی گہر کو میں

Rate it: Views: 234 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 10 Aug, 2011
About the Author: Tariq Baloch

zindagi bohot mukhtasir hai mohobat ke liye
ise nafrat me mat ganwao.....
.. View More

Visit 1648 Other Poetries by Tariq Baloch »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.