مشکل راستے قسط نمبر 56

(farah ejaz, Karachi)

حوریہ ۔۔۔۔۔ حوریہ ۔۔۔۔

جمال !

وہ حیرت سے انہیں دیکھ رہی تھیں ۔۔۔۔ جمال ان کے سرہانے کھڑے بہت محبت سے انہیں دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔ پھر جمال کے چہرے پر ایک اداس سی مسکراہٹ آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔

میں جا رہا ہوں حوریہ ۔۔۔۔۔

کک کہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ بے تابی سے ان سے پوچھنے لگیں ۔۔۔۔۔

کیا تمہیں فرق پڑے گا میرے چلے جانے سے ۔۔۔۔۔۔۔ کیا تممجھے یاد کروگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نن نہیں ۔۔۔۔ مجھے آپ کے جانے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا ۔۔۔۔ اور کیوں میں آپ کو یاد کروں ۔۔۔۔۔

وہ ناراض لہجے میں ان سے بولی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا تمہارے دل میں میرے لئے اب کوئی گنجائش نہیں رہی ۔۔۔ کیا تمہیں مجھ سے محبت نہیں ۔۔۔۔

وہ اس کی آنکھوں میں دیکھتے ہوئے آس بھرے لہجے میں پوچھ رہے تھے ۔۔۔

ہنہ ! محبت ! آپ نے کب اس کا مان رکھا ہے جو مجھ سے تجدید چاہتے ہیں ِِِِِِِ۔۔۔۔۔

کٹیلے لہجے میں بولا تھا ان سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جمال کے چہرے کی اداسی اور گہری ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔ وہ انہیں چپ چاپ محبت سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔

چلے جائیں جمال یہاں سے ۔۔۔۔۔۔ میں اب آپ کی شکل بھی نہیں دیکھنا چاہتی ۔۔۔۔۔۔

وہ غصے سے ان سے بولی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ جمال جو ان کے پلنگ کے سرہانے کھڑے ہوئے تھے ایک نظر ان پر ڈالی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ہاتھ کے اشارے سے الوداع کہا تھا انہیں ۔۔۔۔۔۔۔

جمال !

وہ جو جاءنماز پر ہی سجدے کی حالت میں سوگئی تھیں اٹھ بیٹھیں ۔۔۔ اور بے اختیار انہیں پکارا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔

یا اللہ ! یہ کیسا خواب تھا ۔۔۔۔۔۔ میں اس شخص سے ملنا تو دور اسے دیکھنا بھی نہیں چاہتی ۔۔۔۔۔ پھر کیوں وہ میرے خوابوں میں آرہا ہے ۔۔۔۔ میں اسے خواب میں بھی برداشت نہیں کرسکتی ۔۔۔۔۔۔۔

جب وہ اپنے رب سے دعا مانگ رہی تھیں تبھی دستک ہوئی تھی دروازے پر ۔۔۔۔

جی ! اندر آجائیے ۔۔۔۔

میاں جی اندر داخل ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔

اسلامُ علیکم میاں جی ۔۔۔۔

وعلیکم اسلام بی بی ۔۔۔۔۔ آپ کے لئے ایک بری خبر ہے بی بی ۔۔۔۔۔

جی فرمائیے ۔۔۔۔۔

پتہ نہیں کیوں انہیں عجیب سی گھبراہٹ ہونے لگی تھی ۔۔۔۔

جمال صاحب ۔۔۔۔ کو شدید دل کا دورہ پڑا ہے ۔۔۔۔۔ اور ان کے بچنے کی امید بہت کم ہے بی بی ۔۔۔۔۔۔

جج جمال !

خالی خالی نظروں سے کچھ پل میاں جی کو دیکھتی رہیں ۔۔۔۔۔ پھر تیزی سے باہر کی طرف چل دیں ۔۔۔۔۔۔۔

حوریہ ! حوریہ !

اپنے والد عمر کی پکار پر پلٹ کر انہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔

بابا وہ وو وہ جج جمال ۔۔۔۔۔۔

رندھے لہجے میں فقط اتنا ہی بول پائیں تھیں ۔۔۔۔۔

عمر عرف شانتو نے ان کے سر پر بہت پیار سے ہاتھ رکھا تھا ۔۔۔۔۔

کچھ کہنے کی ضرورت نہیں ہے ۔۔۔۔ میں اور باپو (سردار یوسف) بھی ساتھ چل رہے ہیں ۔۔۔۔ اللہ جمال کو صحت یاب کرے آمین ۔۔۔۔

ان کا ہاتھ تھاما تھا ۔۔۔۔۔ اور پھر سردار یوسف اور عمر کے ساتھ وہ بھی ننگے پاؤں اس شخص سے ملنے چل پڑیں ۔۔۔ جس سے نہ ملنے کی قسم اپنے رب کے سامنے کھا رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

××××××××

سمیر کچھ پتہ چلا عائیشہ کا ۔۔۔۔۔۔۔

سنئیہ آنکھوں میں انسو لئے اپنے شوہر سمیر سے پوچھ رہی تھی ۔۔۔۔ جب سے اسے خبر ملی تھی کہ عائیشہ گھر سے غائب ہے تب سے اس کی بھوک پیاس مٹ گئی تھی ۔۔۔۔ رات کو نیند نہیں آرہی تھی اور دن کو چین ۔۔۔ شہاب مامو ں اور دیگر اس کے ماموں بھی پریشان تھے ۔۔۔۔۔۔ سمیر خود بیوی کی وجہ سے منٹلی ڈسٹرب ہوکر رہ گیا تھا ۔۔۔ اسے اپنی کزن عائیشہ کی بھی فکر لگی ہوئی تھی ۔۔۔۔ ادھر ککو کا حال بھی بہت برا تھا ۔۔۔۔۔ انہیں کسی پل چین نہیں آرہا تھا ۔۔۔۔ شہاب ماموں عائیشہ کو ڈھونڈنے پاکستان پہنچ گئے تھے جہاں ان کی ملاقات وجاہت صاحب سے ہوئی تھی جو سنئیہ اور عائیشہ کی پراپرٹی کے قانونی مشیر تھے ۔۔۔۔۔ وجاہت صاحب نے جب عائیشہ کا پوری جائیداد اپنی بہن کے نام کردینے کا بتایا تو وہ چونک اٹھے تھے ۔۔۔۔ اور پھر اپنے پرسنل اکاؤنٹ میں پڑی ساری رقم ککو کے نام ٹرانسفر کردینے کا بتایا تو شہاب ماموں سر پکڑ کر بیٹھ گئے ۔۔۔۔۔

آخر ایسی کیا افتاد پڑی تھی اس پر جو وہ سب کچھ چھوڑ چھاڑ کر کہیں چلے گئی ہے ۔۔۔۔۔

یہ تو میں نہیں جانتا شہاب صاحب ۔۔۔۔ لیکن اتنا ضرور جانتا ہوں وہ کچھ منٹلی ڈسٹرب لگ رہی تھیں ۔۔۔۔ کوئی چیز انہیں پریشان کر رہی تھی ۔۔۔۔ میں سنئیہ سے اسی سلسلے میں ملنا چاہتا تھا مگر انہوں نے مجھے اس سے ملنے یا کوئی بھی بات بتانے سے یا پوچھنے سے منع کیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔

شہاب ماموں چپ ان کی شکل دیکھتے رہ گئے ۔۔۔۔۔۔ جب یہ سب سنئیہ کو پتا چلا تو وہ روپڑی تھی ۔۔۔۔۔

سمیر کیوں آخر کیوں کیا اس نے ایسا ۔۔۔۔۔۔ مجھے تو جائیداد نہیں چاہئے تھی مجھے تو عائیشہ کافی تھی ۔۔۔۔ کیا رشتوں سے زیادہ ان کی اہمیت ہوتی ہے ۔۔۔۔ اس نے ایسا کیسے سمجھ لیا کک کے اس کا نعمل بدل یہ جائیداد ہوسکتی ہے ۔۔۔۔

وہ رو رہی تھی پوچھ رہی تھی سمیر سے ۔۔۔۔۔ جس کا جواب شاید سمیر کے پاس بھی نہیں تھا ۔۔۔۔ وہ بے بسی سے اپنی چہیتی بیوی کو دکھنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

×××××××××××××××

شام ڈھل جائے گی
بات رہ جائے گی
تجھ سے گلے تو بہت تھے مگر
درمیان فقط محبت رہ جائے گی
مانا تو ہرجائی ہے مگر اے دوست
تجھ پر ہی سانس میری اٹک جائے گی
تجھے پاکر کھونے کا خوف سدا ڈراتا رہا
دور جاکر بھی تو خٰیالوں میں شامل حال رہا
کچھ اسطرح میری زندگی پر حاوی رہا
برباد ہوکر بھی تیرے ہاتھوں
تیرے لئے ہر پل دعا کرتا رہا

وہ چپ چاپ آئی سی یو وارڈ میں داخل ہوئی تھیں ۔۔۔۔ جہاں وہ ستمگر مختلف مشینوں میں جکڑا بےبس پڑا تھا ۔۔۔۔
جمال کی حالت دیکھ کر ان کی آنکھیں چھلک پڑی تھیں ۔۔۔۔۔ یہ وہ جمال تو نہیں تھے ۔۔۔۔ یہ تو کوئی اور ہی جمال تھے نحیف سے کمزور سے ۔۔۔۔۔۔ وہ آہستہ آہستہ قدم اٹھاتی ان کے پیڈ کے پاس آکر کھڑی ہوگئی تھیں ۔۔۔۔۔ اور دھیرے سے ان کا نام پکارا تھا ۔۔۔۔۔۔

جمال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پتہ نہیں کیسے کومے میں پڑے جمال تک ان کی آواز پہنچی تھی ۔۔۔۔۔ دھیرے سے انہوں نے آنکھیں کھولی تھیں ۔۔۔۔ اور انہیں دیکھ کر آنکھوں سے اشک رواں ہوگئے تھے ۔۔۔۔۔۔ ندامت ۔۔۔۔ پچھتاوے ۔۔۔کرب ۔۔۔ پتا نہیں کیا کیا
تھا ان آنکھوں میں کہ وہ تڑپ کر ان کی طرف بڑھی تھیں اور ہولے سے ان کا ناتواں ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیا تھا ۔۔۔۔۔

جمال نے کچھ بولنے کی کوشش کی تھی ۔۔۔۔۔۔ مگر کچھ بول نہ پائے ۔۔۔۔۔ ان کی آنکھیں حوریہ کے چہرے پر گڑی ہوئی تھیں ۔۔۔۔۔۔

میں نے تمہیں معاف کیا جمال ۔۔۔۔۔ میں کسی لمحے بھی خود کو تم سے نفرت پر امادہ نہیں کر سکی ۔۔۔۔۔۔ مجھے تم سے محبت ہے اور میں جانتی ہوں تم بھی میری محبت کو دل سے نکال نہیں پائے ۔۔۔۔۔ ہاں گلہ تھا شکواہ تھا تم سے ۔۔۔۔ اب وہ بھی باقی نہیں رہا ۔۔۔۔۔۔ میں نے تمہیں معاف کیا ۔۔۔۔۔ تم سے بہت محبت کرتی ہوں میں ۔۔۔۔۔
بہت زیادہ ۔۔۔۔۔۔۔۔

جمال شاید یہی سننا چاہتے تھے ۔۔۔۔ تمانیت کا احساس ان کے چہرے پر آگیا تھا ۔۔۔۔ پرسکون انداز میں آنکھیں بند کی تھیں انہوں نے ۔۔۔۔۔ اور ان کے ہونٹ ہلنے لگے تھے ۔۔۔۔ وہ کچھ پڑھ رہے تھے حوریہ ان کے اوپر جھکی تھیں تب انہیں بہت ہلکی آواز میں کلمہ شہادت پڑھتے پایا ۔۔۔۔ انہوں نے بھی ساتھ ساتھ ان کے کلمہ شہادت پڑھنا شروع کردیا ۔۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر بعد جمال کے ہونٹ ہلنا بند ہوگئے تھے ۔۔۔۔۔ چونک کر حوریہ نے دیکھا تھا ان کی طرف ۔۔۔۔ ایک پیاری سی مسکراہٹ تھی چہرے پر ۔۔۔۔ آنکھیں بند ۔۔۔۔۔ گھبرا کر ان پر جھک کر دل کی دھڑکن چیک کی تھی انہوں نے ۔۔۔۔ جہاں سکوت تھا ۔۔۔ خاموشی تھی ۔۔۔۔۔ سیلٍ رواں کب آنکھوں سے جاری ہوگیا پتا ہی نہیں چلا انہیں ۔۔۔۔۔۔ روتے ہوئے ان کی پیشانی کا بوسہ لیا تھا ۔۔۔۔۔

آج رولینے دو ہمیں
پھر اشک کے سوطے سوکھ جائینگے
آج جی بھر کر دیکھ لو ہمیں
پھر ہم اس بھیڑ میں کھو جائینگے
ڈھونڈے سے بھی مل نہ پائینگے
کچھ اسطرح نایاب ہوجائینگے
پھروگے پھر تلاش میں سرگرداں یونہی سدا
پر ہم تم کو مل نہ پائینگے
تڑپوگے روؤ گے جی کا روگ بنالوگے
ہر اجنبی چہرے میں تلاش کروگے
پر اے دوست ! تم ہمکو کہیں نہ پاؤگے
کہیں نہ پاؤگے

×××××××××××××××××

باقی آئندہ ۔۔۔
Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
14 Nov, 2017 Total Views: 19 Print Article Print
NEXT 
About the Author: farah ejaz

My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More

Read More Articles by farah ejaz: 122 Articles with 71110 views »
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB