میں سلمان ہوں(٨١)

(Hukhan, karachi)

کبھی خوشی کبھی غم ہے یہ زندگی
کبھی دھوپ تو کبھی چھاؤں ہے یہ زندگی
کبھی ہے محفل تو
کبھی بس تنہا ہے یہ زندگی
بس اک سفر ہے زندگی

روزی نداکی امی کے پاس بیٹھ کر انہیں یقین دلا رہی تھی،،،کہ اس شادی کے پیچھے،،
کریم صاحب اور ان کی پوری فیملی کھڑی ہے،،،کل کو کچھ اونچ نیچ ہوئی،،،تو وہ بذاتِ خود اس کی،
ذمہ دار ہوگی،،،آپ امجد سے نہیں بلکہ مجھ سے شکوہ کیجئے گا،،،کسی بھی فضول رسم یا خرچا،
کرنے کی ضرورت نہیں ہے،،،آپ ہرطرح سے خوشی منا لیجئے،،،اک پائی بھی خرچ کرنےکی ضرورت نہیں،،
ہم نےامجدکو کہہ دیا ہے،،،وہ اپنےگھرکو جس قدر مناسب کرسکتا ہے،،،وہ کر لےگا،،،
بس آپ نے کسی سے کچھ نہیں کہنا ہے،،،سارا حساب کتاب میں خود کرلوں گی،،،ندا کی امی کے،،
دل میں لڈو پھوٹ رہے تھے،،،نداکے باپ نے کبھی سوچا بھی نہ تھا،،،کہ ان کی بیٹی اتنی خوش نصیب،،
ہے،،،وہ ایسے گھر میں بیاہ کر جارہی تھی،،،جہاں بہت مضبوط لوگ سایہ کیے ہوئے تھے،،،
دنیا میں ایسے لوگ بھی تھے،،،سلمان خود حیران تھا،،،کہ ندا کے گھرروزی اپنی ماما کو بھی لے آئی،
تھی،،،یہ اس کے لیے حیران کن تھا،،،وہ لوگ اسکے خیال سے ذیادہ نیک تھے،،،
یا پھر روزی اس گھرمیں اپنی بات منوا سکتی تھی،،،جو کام اس نےشروع کیا تھا،،،اب اسے روزی نے،
اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا،،،اس پر سےبوجھ کم سے کم ہوتا جارہا تھا،،،
ندا کے گھر والوں کو اس قدر ضمانت مل جانے کے بعد اسے یقین تھا،،،کہ اب کام بہت آسان ہوگیا ہے،،،
ابھی وہ ان سوچوں میں ہی گم تھاکہ روزی نے ندا کا ہاتھ پکڑ کے کہا،،،مجھے تم سے اکیلے میں،،،
کچھ بات کرنی ہے،،،
ندا خاموشی سے اسے لے کر سلمان کے کمرے کی طرف بڑھنے لگی،،،ندا کی امی کے چہرےپر،،،
پریشانی کے آثار نظر آنے لگے،،،روزی ندا کی امی کے احساسات کو سمجھ گئی،،،
انٹی آپ ذرا بھی فکر نہ کریں،،،میں بس ندا کی مرضی جان لینا چاہتی ہوں،،،میں اس کے جذبات یا
آنے والےکل کے اندیشوں کوکم کرنا چاہتی ہوں،،،

شریعت بھی یہی کہتی ہے،،،سلمان کے پیروں تلے سے زمین نکل گئی،،،نداکی مرضی۔۔۔
میرے خدا۔۔سلمان نے دونوں ہاتھوں سے سر پکڑ کے جھکا لیا،،،ندا آج سارا کام بگاڑ دے گی،،،
اب کیا ہوگا،،،،،(جاری)
 

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
12 Sep, 2017 Total Views: 231 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 667 Articles with 232922 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
wow,,,,,,baree tareefein bhai ki,,,,congratulation,,,ap ka haq hay
By: rahi, karachi on Sep, 16 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Sep, 17 2017
0 Like
insani nafsiat ka buhat ghera mushaheda hai ap ko ghaleban
buht khubi sy apny tmam kirdaron k zarye insani jazbat o ehsasat ki trjumani buht maharat sy ada krwaty hain ap apni takhleeqat mein
sda khush rahain
good luck and stay blessed always Brother
By: uzma ahmad, Lahore on Sep, 12 2017
Reply Reply
0 Like
sister thx for like am so lucky and blessed i have readers like you who make me feel so proud yes its true without emotions and feelings we are just like balloon so good writer should be aware of how he should explain human feelings and there acts
By: hukhan, karachi on Sep, 13 2017
1 Like
interesting,,,,very nice
By: Mini, mandi bhauddin on Sep, 12 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Sep, 13 2017
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB