میں سلمان ہوں ( قسط 17)

(hukhan, karachi)

HuKhan

سلمان کا امتحان ابھی ختم نہیں ہوا تھا --- وہ جانتا تھا کہ یہ شازیہ کی آواز ہے --- مگر اس وقت وہ ایک خالی لفافے کی طرح تھا جس میں صرف ہوا کا گزر ہی ممکن تھا ----
کم سے کم چائے ہی پی لیتے--- تم تو میرے گھر آنے پر سب کو مانا کر دیتے تھے--- کہ چائے صرف شازیہ ہی بنائی گی اور کسی کو بھی چائے بنانا نہیں آتا---اور تم میرے گھر کے سارے پتی ، چینی دودھ ایک ٹائم کے چائے میں جھونک دیتے تھے --- سلمان نے مسکراتے ہوئے کہا ---
شازیہ کا چہرہ بے رنگ ہو رہا تھا --- جیسے کوئی سفید چادر ہو----- وہ ایک ایسے کھلاڑی کی طرح تھی ---- جیسے میچ ہارنے کا یقین ہو چلا ہوں ---
ویسے بھی میرا اب اس چائے پر کوئی حق نہیں --- حق تو پہلے بھی نہیں تھا ---- بس میں ہی وقت کو سہی طریقے سے پڑھ نہیں پایا ---
سلمان نے صفائی پیش کی --- اور مزید کہا ---
ہم جیسے لوگوں کو پسند نا پسند کا کوئی حق نہیں ہوتا ہمیں بس جینا ہوتا ہے --- جب تک بلاوا نہیں آجاتا ہم اپنی مرضی سے مر بھی نہٰیں سکتے --- تم بہت اچھی لڑکی ہوں --,And You Deserve Much Better Person Then I.----
سلمان نے اس سے نظریں ملائے بغیر کہا تھا----
تم جب بھی جھوٹ بولتے ہو یا غصہ کرتے ہو تو انگلش کا سہارا کیوں لیتے ہوں --- تم تو خود کہتے تھے کہ تمہیں جھوٹ بولنے پر عبور حاصل ہے --- ماں ٹھیک کہتی تھی وہ کبھی بھی نہیں مانے گا ---- اور ہم کسی کمزور سے انسان کے لیے اپنی بیٹی کو ساری عمر نہیں بیٹھا سکتے--- جیسے خود سہارے کی تلاش ہو وہ کسی اور کو کیا سہارا دے گا--- اب وہ انکار کر کے جائے گا سمجھو منہ پر تھوک کر جائے گا--- بیٹی جتنی بھی پیاری ہوں بوجھ ہی ہوتی ہے---
شازیہ کے لہجے میں دکھ کے ساتھ تلخی بھی امڈ آئی تھی---
پتا نہیں میں تمہیں کیوں سمجھ نہیں پائی تم ایک کمزور اور بزدل انسان ہو-----
بادل کے زوردار گرج نے سلمان کو واپس حال میں پہنچا دیا --- سردی اوپر سے بارش --- سلمان نے گلی کی جانب کھولنے والی کھڑکی کھولی --- باہر بادل برسنے کی تیاری کر رہے تھے ---- گلی میں بچے کھیل رہے تھے --- ہر گھر میں اتنے بچے تھے --- کہ کچھ بچے کھیل کھود کر تھک جاتے تھیں تو ان کی جگہ اور بجے آجاتے تھیں --- مجال کے گلی کبھی خالی رہ جائے --- کمرے میں آنے والی تازہ اور ٹھنڈی ہوا نے تازگی سے پیدا کر دی --- اب یہ بارش کچھڑ بنا دے گی ویسے بھی یہاں کونسی کم گندگی تھی اب یہ بارش رہی سہی کسر پوری کر دے گی ---
سلمان کو ٹھنڈ کے ا حساس نے اس کمزور سے چادر کا سہارا لینے پر مجبور کر دیا ---
سلمان بابو---- سلمان بابو------ جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔)
 

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
23 Mar, 2017 Total Views: 585 Print Article Print
NEXT 
About the Author: hukhan

Read More Articles by hukhan: 28 Articles with 15817 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
very nice and beautiful peotry
By: abrish anmol, sargodha on Mar, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Mar, 27 2017
0 Like
Very nice episode,,,Weldone
By: Mini, mandi bhauddin on Mar, 25 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Mar, 25 2017
0 Like
v nice epi bhaiiiiiiiiiiiiiiiiiiii welldone :)
By: Zeena, Lahore on Mar, 24 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Mar, 24 2017
0 Like
goooooood epi,,,,,,,,,
By: umama khan, kohat on Mar, 24 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Mar, 24 2017
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB