لاہور: ایک رات میں مسجد کی تعمیر کا دلچسپ واقعہ

 

لاہور کے شاہ عالم چوک میں ایک ایسی مسجد واقع ہے جسے ایک رات میں تعمیر کیا گیا تھا- اس مسجد کی اتنے قلیل وقت میں تعمیر کی وجہ اور واقعہ بھی انتہائی دلچسپ اور ایمان افروز ہے-

تاریخ بتاتی ہے کہ انگریزوں کے دور میں اس مقام سے ایک مسافر سے گزر ہوا اور اس نے یہاں نماز ادا کی جبکہ یہ علاقہ اس وقت ہندوؤں کی اکثریت کا حامل تھا- ہندوؤں کو یہ برداشت نہ ہوا اور اور انہوں نے ہنگامہ آرائی شروع کردی-
 


معاملہ عدالت تک جا پہنچا اور وہاں ہندوؤں کا مؤقف تھا کہ اس جگہ پر مندر تعمیر ہوگا جبکہ مسلمان یہاں مسجد تعمیر کرنا چاہتے تھے- اس موقع پر مسلمانوں کے وکیل نے انہیں تجویز دی کہ اگر وہ یہاں صبح فجر سے پہلے مسجد تعمیر کرلیتے ہیں تو کیس کا فیصلہ ان کے حق میں ہوجائے گا- مسلمانوں کی جانب سے اس کیس کی پیروی قائد اعظم محمد علی جناح رحمۃ اللہ علیہ کر رہے تھے-

یہ سننا تھا کہ مسلمانوں نے گاماں پہلوان کی قیادت میں راتوں رات مسجد تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا اور جس مسلمان کے پاس جو سامان تھا اس نے وہ مسجد کی تعمیر کے لیے وقف کردیا۔ یہاں تک کہ خواتین رات بھر اپنے سروں پر پانی رکھ کر لاتی رہیں تاکہ مسجد کی تعمیر ممکن ہوسکے-

دوسری جانب مسجد کی تعمیر مکمل ہونے کے بعد عدالت نے بھی مسلمانوں کے حق میں فیصلہ سنا دیا۔
 


یہ مسجد 1917 میں تعمیر کی گئی اور اس کا نام “مسجد شب بھر“ رکھا گیا- یہ مسجد 3 مرلے کے رقبے پر تعمیر ہے-

علامہ اقبال کو جب تیسرے روز اس مسجد کی تعمیر کا پتہ چلا تو آپ یہاں تشریف لائے اور بہت خوش ہوئے اور یہی وہ موقع تھا جب انہوں نے یہ مشہور شعر کہا:
مسجد تو بنا دی شب بھر میں ایماں کی حرارت والوں نے
من اپنا پرانا پاپی تھا برسوں میں نمازی بن نہ سکا

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
01 Jun, 2016 Total Views: 187821 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
AOA. You have changed the story completely. Just try to understand the meaning of Illamma Iqbal saying if u have little common sense.
By: Shafiq, Karachi on Jun, 19 2016
Reply Reply
0 Like
Thanksgiving the correction of build the Masjid
By: Sajjad mir, Gujranwala on Jun, 17 2016
Reply Reply
0 Like
esa kab hua ??? amazing story
By: jawed, karachi on Jun, 17 2016
Reply Reply
0 Like
تصحیح فرما لیں۔
گاما پہلوان نے اس مسجد کی تعمیر میں حصہ نہیں لیا تھا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ گاما پہلوان قیام پاکستان کے بعد لاہور آئے تھے۔ انیس سو ستائس میں تو انہوں نے پٹیالہ میں زبسکو سے دوسری کشتی لڑی تھی۔ اس لیے یہ کہنا کہ مسلمانوں نے گاما پہلوان کی قیادت میں یہ مسجد تعمیر کی تھی، تاریخی طور پر درست نہیں ہے
۔
By: Saleem Ullah Shaikh, Karachi on Jun, 06 2016
Reply Reply
1 Like
V nice
By: zubi, lahore on Jun, 04 2016
Reply Reply
7 Like
Masha Allah bout achi information hai .a bout bady bat hai k 1din mai masjid tamer karna a hai mosalmanon ka jazbat .kash os din mai be mojod ota is kam mai be mera at shamil ota khosh naseeb log o hai jo is kam mai shamil OE hai .regard
By: younus baloch , quetta on Jun, 17 2016
1 Like
An excellent informative msg. So thnx.
By: Tariq Mansoor, Karachi on Jun, 04 2016
Reply Reply
0 Like
subhan ALLAH BHOOT achi malomat h jazby se bhari post h MASHA ALLLAH
By: Basit Ali Farooqui, karachi on Jun, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Thats amezing kitny azeem log thy jinho ne rato rat masjid bna di yakenan wo janti hain
By: Shahrukh malik, Lahore on Jun, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Mashallha
By: saqabali, islambad on Jun, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Same Masjid with same story has been constructed in Haripur Hazara
By: Waseem Akhtar , Haripur on Jun, 04 2016
Reply Reply
4 Like
THERE MUST BE SOME PEOPLE LIKE THOSE WHO BUILD MOSQUE IN OVERNIGHT.PAKISTAN IS ONE TENTH OF INDIA.I DO NOT CONSIDER INDIA AS A GOOD NEIGHBOUR.INDIA KEPT THROWING MONKEY WRENCHES TO PAKISTAN SINCE ITS INCEPTION. IF PAKISTANI AND INDIAN HAVE NO RELATION, IT DOES NOT MEAN BOTH NATIONS ARE KEPT APART BECAUSE OF THE LAND -SCAPE HURDLES. PAKISTAN HAS TAKEN SOME STEPS,I LIKE TO SAY THE BALL IS IN INDIAN COURT.NOW THE INDIAN PUBLIC SHOULD CRUMBLE THE WALL OF HATE WHEN OTHERS ARE OR HAVE BEEN DRILLING TUNNEL FOR 20 YEARS SO THE NEIGHBOURS MEET EASILY ANDQUICKLY. WHAT IS MISSING IN M E THAT I CAN NOT SEE MY NEIGHBOUR.??????????????????????
By: IFTIKHAR AHMED KHAN, CALGARY ALBERTA CANADA on Jun, 02 2016
Reply Reply
20 Like
behtreen article,
By: azeem, lahore on Jun, 02 2016
Reply Reply
12 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ
It is located in Shalimi Chowk, It was constructed in 1917. The issue was that Shalimi Chowk was humongous place and in the center of Chowk was some place about 3-Marlas (Approx 270*3 Sq. Feet), Hindus Wanted to make their temple there and Muslims wanted to build a Masjid.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB